NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Sabr karna meri

Nohakhan: Ali Bahadar
Shayar: Najaf Murshidabadi


haye sakina haye sakina
sabr karna meri jaan sakina

maa ki aaghosh may kal se sona
yaad aaye meri jab na rona
mujhse itna karo aaj waada
sabr karna meri jaan sakina
haye sakina haye sakina...

jab na aaunga wapas mai ran se
baandhe jayenge shaane rasan se
aur rida sar se cheenenge aada
sabr karna meri jaan sakina
haye sakina haye sakina...

tum to poti ho shere khuda ki
aur abbas ki ho bhatiji
har musibat pe tum shukr karna
sabr karna meri jaan sakina
haye sakina haye sakina...

maarne mujhko aata hai zaalim
dekh kar muskurata hai zaalim
jaane do mujhko maqtal khudaara
sabr karna meri jaan sakina
haye sakina haye sakina...

misle abbas honga juda mai
na samajhna hoo tumse khafa mai
saath tere rahunga hamesha
sabr karna meri jaan sakina
haye sakina haye sakina...

kitne naazon se paala hai tujhko
hoti hai kya yateemi na poocho
keh na paaega tujhse ye baba
sabr karna meri jaan sakina
haye sakina haye sakina...

tera baba to zinda hai ab tak
sochta hoo rahunga mai kab tak
ho gaya hai ye dushman zamana
sabr karna meri jaan sakina
haye sakina haye sakina...

baap mar jaaye jiska ay beti
usko kehte hai daaghe yateemi
ab phupi hai tumhara sahara
sabr karna meri jaan sakina
haye sakina haye sakina...

ay najaf rok apne qalam ko
thaam le badh ke sheh ke alam ko
padta reh yunhi nauha tu sheh ka
sabr karna meri jaan sakina
haye sakina haye sakina...

ہاے سکینہ ہاے سکینہ
صبر کرنا میری جان سکینہ

ماں کی آغوش میں کل سے سونا
یاد آے میری جب نہ رونا
مجھ سے اتنا کرو آج وعدہ
صبر کرنا میری جان سکینہ
ہاے سکینہ ہاے سکینہ۔۔۔

جب نہ آؤں گا واپس میں رن سے
باندھے جائیں گے شانے رسن سے
اور ردا سر سے چھینیں گے اعدا
صبر کرنا میری جان سکینہ
ہاے سکینہ ہاے سکینہ۔۔۔

تم تو پوتی ہو شیر خدا کی
اور عباس کی ہو بھتیجی
ہر مصیبت پہ تم شکر کرنا
صبر کرنا میری جان سکینہ
ہاے سکینہ ہاے سکینہ۔۔۔

مارنے مجھکو آتا ہے ظالم
دیکھ کر مسکراتا ہے ظالم
جانے دو مجھکو مقتل خدارا
صبر کرنا میری جان سکینہ
ہاے سکینہ ہاے سکینہ۔۔۔

مثل عباس ہونگا جدا میں
نہ سمجھنا ہوں تم سے خفا میں
ساتھ تیرے رہونگا ہمیشہ
صبر کرنا میری جان سکینہ
ہاے سکینہ ہاے سکینہ۔۔۔

کتنا نازوں سے پالا ہے تجھکو
ہوتی ہے کیا یتیمی نہ پوچھو
کہہ نہ پائے گا تجھ سے یہ بابا
صبر کرنا میری جان سکینہ
ہاے سکینہ ہاے سکینہ۔۔۔

تیرا بابا تو زندہ ہے اب تک
سوچتا ہوں رہوں گا میں کب تک
ہو گیا ہے یہ دشمن زمانہ
صبر کرنا میری جان سکینہ
ہاے سکینہ ہاے سکینہ۔۔۔

باپ مر جائے جس کا اے بیٹی
اسکو کہتے ہیں داغ یتیمی
اب پھپھی ہے تمہارا سہارا
صبر کرنا میری جان سکینہ
ہاے سکینہ ہاے سکینہ۔۔۔

اے نجف روک اپنے قلم کو
تھام لے بڑھ کے شہ کے الم کو
پڑھتا رہ یونہی نوحہ تو شہ کا
صبر کرنا میری جان سکینہ
ہاے سکینہ ہاے سکینہ۔۔۔