NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Qaid khane may

Nohakhan: Raza Ali Khan
Shayar: Haider Mirza


qaid khane may andhera hi andhera hoga
is may ek choti si bachi ka janaza hoga

bediyan paon may haathon pa bahan ka laasha
socho kis tarhe se abid ne uthaaya hoga
qaid khane may...

poochti rehti thi zainab se sakina payham
kya watan laut ke humko kabhi jaana hoga
qaid khane may...

wo sakina jise seene pe sulaate thay hussain
kya khabar thi ke tamache usay khaana hoga
qaid khane may...

baaliyan kaano se jab shimr ne cheeni hogi
us ghadi laasha e abbas bhi tadpa hoga
qaid khane may...

har tamache pa ye kehti thi ye kamsin bachi
ay shaki ruk abhi ammu mera aata hoga
qaid khane may...

قید خانے میں اندھیرا ہی اندھیرا ہوگا
اس میں اک چھوٹی سی بچی کا جنازہ ہوگا

بیڑیاں پاؤں میں ہاتھوں پہ بہن کا لاشہ
سوچو کس طرح سے عابد نے اٹھایا ہوگا
قید خانے میں۔۔۔

پوچھتی رہتی تھی زینب سے سکینہ پیہم
کیا وطن لوٹ کے ہم کو کبھی جانا ہوگا
قید خانے میں۔۔۔

وہ سکینہ جسے سینے پہ سلاتے تھے حسین
کیا خبر تھی کہ طمانچے اسے کھانا ہوگا
قید خانے میں۔۔۔

بالیاں کانوں سے جب شمر نے چھینی ہوگی
اس گھڑی لاشہء عباس بھی تڑپا ہوگا
قید خانے میں۔۔۔

ہر طمانچے پہ یہ کہتی تھی یہ کمسن بچی
اے شقی رک ابھی عمو میرا آتا ہوگا
قید خانے میں۔۔۔