NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Laut kar aajao

Nohakhan: Munawar Hussain
Shayar: Najaf Murshidabadi


qaime ke darwaze se ye di sakina ne sada
laut kar aajao wapas ho kahan ammu
ho gaya pardes may ab jurm pani maangna
laut kar aajao waapas ho kahan ammu

hoo khadi qaime ke dar par khaali kooza thaam kar
pyaas ki shiddat nahi seh paungi mai lamha bhar
phat'ta hai gham se jigar aur khushk hai mera gala
laut kar aajao wapas...

yaad ab aate hai mujhko guzre jo yasrab may din
saamne rakhte thay pani kuch zuban se bole bin
lamha bhar bhi pyaas ka ehsaas na hone diya
laut kar aajao wapas...

ho gaya maloom ab to pyaas kehte hai kise
kya khabar thi din ye mujhko bhi padenge dekhne
char saala umr may ye dard hai sehna pada
laut kar aajao wapas...

paas aate thay hamesha meri ek aawaz par
dekh kar hairaan hoo ab badle se andaaz par
kyun nahi aate palat kar kya hui mujhse khata
laut kar aajao wapas...

kho na jaaye pyaas ki in wadiyon may hum kahin
lag raha hai ab banegi shaam tak turbat yahin
daalne turbat pe pani aaoge kya ab chacha
laut kar aajao wapas...

sabr rakhe kis tarha se bhai bhi cheh maah ka
pani maange kis tahra se bhai bhi cheh maah ka
chand lamhon may hai lagta aayegi usko qaza
laut kar aajao wapas...

mai bujha'ungi chacha jaan apne hi ashkon se pyaas
hai dua ke jald aao khairiyat se mere paas
ab kabhi na pyaas ka shikwa karungi ba-khuda
laut kar aajao wapas...

aap hote to munaver hoti meri kayenaat
aap ke bin ho gayi hai ab andheri kayenaat
likh ke ye nauha najaf bhi karta hai aah o buka
laut kar aajao wapas...

خیمے کے دروازے سے یہ دی سکینہ نے صدا
لوٹ کر آجاؤ واپس ہو کہاں عمو
ہوگیا پردیس میں اب جرم پانی مانگنا
لوٹ کر آجاؤ واپس ہو کہاں عمو

ہو کھڑی خیمے کے در پر خالی کوزہ تھام کر
پیاس کی شدت نہیں سہہ پاؤں گی میں لمحہ بھر
پھٹتا ہے غم سے جگر اور خشک ہے میرا گلا
لوٹ کر آجاؤ واپس۔۔۔

یاد اب آتے ہیں مجھکو گزرے جو یثرب میں دن
سامنے رخت تھے پانی کچھ زباں سے بولے بن
لمحہ بھر بھی پیاس کا احساس نہ ہونے دیا
لوٹ کر آجاؤ واپس۔۔۔

ہوگیا معلوم اب تو پیاس کہتے ہیں کسے
کیا خبر تھی دن یہ مجھکو بھی پڑیں گے دیکھنے
چار سالہ عمر میں یہ درد ہے سہنا پڑا
لوٹ کر آجاؤ واپس۔۔۔

پاس آتے تھے ہمیشہ میری اک آواز پر
دیکھ کر حیراں ہوں اب بدلے سے انداز پر
کیوں نہیں آتے پلٹ کر کیا ہوی مجھ سے خطا
لوٹ کر آجاؤ واپس۔۔۔

کھو نہ جائے پیاس کی ان وادیوں میں ہم کہیں
لگ رہا ہے اب بنے گی شام تک تربت یہی
ڈالنے تربت پہ پانی آؤ گے کیا اب چچا
لوٹ کر آجاؤ واپس۔۔۔

صبر رکھے کس طرح سے بھای بھی چھ ماہ کا
پانی مانگے کس طرح سے بھائی بھی چھ ماہ کا
چاند لمحوں میں ہے لگتا آے گی اس کو قضا
لوٹ کر آجاؤ واپس۔۔۔

میں بجھاؤں گی چچا جاں اپنے ہی اشکوں سے پیاس
ہے دعا کے جلد آؤ خیریت سے میرے پاس
اب کبھی نہ پیاس کا شکوہ کروں گی با خدا
لوٹ کر آجاؤ واپس۔۔۔

آپ ہوتے تو منور ہوتی میری کاینات
آپ کے بن ہو گیء ہے اب اندھیری کاینات
لکھ کے یہ نوحہ نجف بھی کرتا ہے آہ و بکا
لوٹ کر آجاؤ واپس۔۔۔