NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Labaik labaik

Nohakhan: Irfan Hussain
Shayar: Akhtar Sirsvi


aaja ne do ghaibat se waaris ko shaheedon ke
ud jayenge dunya may khud hosh yazeedon ke
jab haath may hyder ki wo talwaar uthayega
halqon may yazeedon ke khoraam machayega
sab zulm ke mansoobe mitti may miladega
ek waaris e hyder hai jo ghaib se aayega
dadi ka mazaar apne haaton se banayega

ek waaris e hyder hai jo ghaib se aayega
labbaik labbaik ya saahibaz zamaan

ek waaris e hyder hai jo ghaib se aayega
kya shay hai azadari dunya ko batayega
ek waaris e hyder...

kaabe se alam lekar is shaan se niklega
quran o imamat ka juzdaan se niklega
tauheed ke jalwon may islam nahayega
labbaik labbaik...
ek waaris e hyder...

is sher ki aamad ka andaaz ajal hoga
ghazi ki nigahon may hyder ka ghazab hoga
bhoole se koi bhi phir kaabe may na aayega
labbaik labbaik...
ek waaris e hyder...

har dil may ziarat ke armaan bade honge
isa bhi jama'at ki khwahish may khade honge
jab apna musalla wo pani pe bichayega
labbaik labbaik...
ek waaris e hyder...

hamraah imamat ke abbas bhi aayenge
shabbir ke khadmon may dunya ko jhukayenge
labbaik ya abbas labbaik ya abbas

saqqai ka mansab phir abbas sambhalenge
sadiyon ki ladaai ka armaan nikalenge
jab mashk e sakina wo parcham may sajayega
labbaik ya abbas labbaik ya abbas
ek waaris e hyder...

socho to gunahgaron kya doge jawab usko
sadiyon ki khayanat ka lena hai hisaab usko
zehra ke luteron ko qabron se uthayega
labbaik labbaik...
ek waaris e hyder...

shabbir ki ek majlis kaabe may bapa hogi
allah ke ghar may bhi ye rasm ada hogi
khud farshe aza apne hi haathon se sajayega
kaabe may sada goonjegi
hussain hussain hussain hussain

aflaak pe chamkega jab chand moharram ka
kaabe may bhi ghul hoga shabbir ke matam ka
ja ran ke liye akhtar dunya may tabaahi hai
hum ahle aza iske lashkar ke sipaahi hai
munkir hai jo iska jannat na jayega

آجانے دو غیبت سے وارث کو شہیدوں کے
اڑ جائیں گے دنیا میں قد ہوش یزیدوں کے
جب ہاتھ میں حیدر کی وہ تلوار اٹھاے گا
حلقوں میں یزیدوں کے کہرام مچاے گا
سب ظلم کے منصوبے مٹی میں ملا دے گا
اک وارث حیدر ہے جو غیب سے آے گا
دادی کا مزار اپنے ہاتھوں سے بناے گا

اک وارث حیدر ہے جو غیب سے آے گا
لبیک لبیک یا صاحب الزمان

اک وارث حیدر ہے جو غیب سے آے گا
کیا شہ ہے عزاداری دنیا کو بتاے گا
اک وارث حیدر۔۔۔

کعبے سے الم لے کر اس شان سے نکلے گا
قرآن و امامت کا جزدان سے نکلے گا
توحید کے جلوؤں میں اسلام نہاے گا
لبیک لبیک۔۔۔
اک وارث حیدر۔۔۔

اس شیر کی آمد کا انداز اجل ہوگا
غازی کی نگاہوں میں حیدر کا غضب ہوگا
بھولے سے کوئی بھی پھر کعبے میں نہ آے گا
لبیک لبیک۔۔۔
اک وارث حیدر۔۔۔

ہر دل میں زیارت کے ارمان بڑے ہونگے
عیسیٰ بھی جماعت کی خواہش میں کھڑے ہوں گے
جب اپنا مصلہ وہ پانی پہ بچھاے گا
لبیک لبیک۔۔۔
اک وارث حیدر۔۔۔

ہمراہ امامت کے عباس بھی آے نگے
شبیر کے قدموں میں دنیا کو جھکاے نگے
لبیک یا عباس لبیک یا عباس

سقای کا منصب پھر عباس سنبھالیں گے
صدیوں کی لڑائی کا ارمان نکالیں گے
جب مشک سکینہ وہ پرچم میں سجاے نگے
لبیک یا عباس لبیک یا عباس
اک وارث حیدر۔۔۔

سوچو تو گنہگاروں کیا دوگے جواب اس کو
صدیوں کی خیانت کا لینا ہے حساب اس کو
زہرا کے لٹیروں کو قبروں سے اٹھائے گا
لبیک لبیک۔۔۔
اک وارث حیدر۔۔۔

شبیر کی اک مجلس کعبے میں بپا ہوگی
اللہ کے گھر میں بھی یہ رسم ادا ہوگی
قد فرش عزا اپنے ہی ہاتھوں سے سجاے گا
کعبے میں صدا گونجے گی
حسین حسین حسین حسین

افلاک پہ چمکے گا جب چاند محرم کا
کعبے میں بھی غل ہوگا شبیر کے ماتم کا
جا رن کے لئے اختر دنیا میں تباہی ہے
ہم اہلِ عزا اس کے لشکر کے سپاہی ہیں
منکر ہے جو اس کا جنت نہ جائے گا