NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ya habeebe kibriya

Nohakhan: Nazeer Irani
Shayar: Aashiq Irani


ya habeeb e kibriya zainab hui be-aasra
shaah ke sukhe gale par shimr ka khanjar chala

chal base aun o mohamad mere do wo noore ain
aise aalam may bhala kyun kar milega dil ko chain
phir bhi mai karti rahi us haal may shukre khuda
ya habeebe kibriya...

laashe qasim tukde tukde hoke bikhri khaak par
kaash mujhko maut aati mai na sunti ye khabar
maadare qasim ka ab is dunya may kya reh gaya
ya habeebe kibriya...

mere abbas e jari ke ho gaye shaane qalam
chidh gayi mashk e sakina khoon may dooba alam
qatl e abbas e jari se ho gaya mehshar bapa
ya habeebe kibriya...

seena e kadiyal jawan se jaari hai ab tak lahoo
laashe akbar darmiyan hai bibiyan hai chaar soo
umme laila ki nigahon may andhera cha gaya
ya habeebe kibriya...

karta hai asghar ko zibha hurmula is teer se
nehr karta hai wo zaalim oont ko jis teer se
sheh ki qurbani jo dekhi ro diye arz o samaa
ya habeebe kibriya...

kar chuka jab dafn asghar ko mera bhai hussain
aap ka pyara nawasa wo azeez e waalidayn
jaanib e maqtal chala hokar sawaar e zuljana
ya habeebe kibriya...

raahe haq anwer hussain ibne ali sar raabedaar
dast dar daste yazeed e be-haya hargiz na daar
gufta aashiq zainab e muztar basad aah o buka
ya habeebe kibriya...

یا حبیب کبریا زینب ہوی بے آسرا
شاہ کے سوکھے گلے پر شمر کا خنجر چلا

چل بسے عون و محمد میرے دو وہ نور عین
ایسے عالم میں بھلا کیوں کر ملے گا دل کو چین
پھر بھی میں کرتی رہی اس حال میں شکر خدا
یا حبیب کبریا۔۔۔

لاشے قاسم ٹکڑے ٹکڑے ہوکے بکھری خاک پر
کاش مجھکو موت آتی میں نہ سنتی یہ خبر
مادر قاسم کا اب اس دنیا میں کیا رہ گیا
یا حبیب کبریا۔۔۔

میرے عباس جری کے ہوگےء شان قلم
چھد گیء مشک سکینہ خون میں ڈوبا الم
قتل عباس جری سے ہو گیا محشر بپا
یا حبیب کبریا۔۔۔

سینۂ کڑیل جواں سے جاری ہے اب تک لہو
لاشے اکبر درمیاں ہے بی بیاں ہیں چار سو
ام لیلیٰ کی نگاہوں میں اندھیرا چھا گیا
یا حبیب کبریا۔۔۔

کرتا ہے اصغر کو ذبح حرملہ اس تیر سے
نہر کرتا ہے وہ ظالم اونٹ کو جس تیر سے
شہ کی قربانی جو دیکھی رو دیےء ارض و سماں
یا حبیب کبریا۔۔۔

کر چکا جب دفن اصغر کو میرا بھی حسین
آپ کا پیارا نواسہ وہ عزیز والدین
جانب مقتل چلا ہوکر سوار ذوالجناح
یا حبیب کبریا۔۔۔

راہ حق انور حسین ابنِ علی سر رابیدار
دست در دست یزید بے حیا ہر گز نہ دار
گفتا عاشق زینب مضطر بصد آہ و بکا
یا حبیب کبریا۔۔۔