NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Karbala walon ke

Nohakhan: Irfan Hussain


karbala walon ke nayab azadar hai hum
ghame shabbir pe jaan dene ko tayyar hai hum

jab bhi abbas ke parcham ko utha lete hai
apne hi khoon may hum log naha lete hai
azm hyder se to zahra se dua lete hai
ghame shabbir may dhaala hua kirdaar hai hum
karbala walon ke...

matami chehre ujaalon se wuzu karte hai
pairahan zakhmon ke ashkon se rafoo karte hai
phool seeno ko to aankhon ko lahoo karte hai
jisko zainab ne sajaya hai wo gulzaar hai hum
karbala walon ke...

warf har saans hai shabbir tere gham ke liye
haath shaano ka hai abbas ke matam ke liye
parwarish ki gayi hum sab ki moharram ke liye
sogaya saara jahan aaj bhi be-daar hai hum
karbala walon ke...

behte pani may kabhi aag laga dete hai
kabhi jalte hue sholon ko bujha dete hai
hum azadaron ke aansu ye sada dete hai
daawar e sabr ka moo bolta inkaar hai hum
karbala walon ke...

ghame dunya ka koi gham nahi karte hum log
raunaqe shamme aza kam nahi karte hum log
jab talak shaah ka matam nahi karte hum log
hota rehta hai ye ehsaas ke bekaar hai hum
karbala walon ke...

yun rishe humlaye shabbir kahan khatm hui
garm ye jazbaye zanjeer kahan khatm hui
ab bhi zainab ki wo taqreer kahan khatm hui
wohi kufa hai ye dunya wohi mukhtaar hai hum
karbala walon ke...

jo dilon may ghame sarwar ki khalish rakhte hai
jayb may masle atameez tapish rakhte hai
har nazar may mutawakkil ki rawish rakhte hai
aise logon se har ek haal may bezaar hai hum
karbala walon ke...

kitna nayaab hai quran azadari ka
sab ko haasil nahi irfan azadari ka
martaba dekh musalman azadari ka
ek wafadar khabeele ke azadar hai hum
karbala walon ke...

کربلا والوں کے نائب عزادار ہیں ہم
غم شبیر پہ جاں دینے کو تیار ہیں ہم

جب بھی عباس کے پرچم کو اٹھا لیتے ہیں
اپنے ہی خون میں ہم لوگ نہا لیتے ہیں
ازم حیدر سے تو زہرا سے دعا لیتے ہیں
غم شبیر میں ڈھالا ہوا کردار ہیں ہم
کربلا والوں کے۔۔۔

ماتمی چہرے اجالوں سے وضو کرتے ہیں
پیرہن زخموں کے آشکوں سے رفو کرتے ہیں
پھول سینوں کو تو آنکھوں کو لہو کرتے ہیں
جس کو زینب نے سجایا ہے وہ گلزار ہیں ہم
کربلا والوں کے۔۔۔

وقف ہر سانس ہے شبیر تیرے غم کے لیئے
ہاتھ شانوں کا ہے عباس کے ماتم کے لئے
پرورش کی گئی ہم سب کی محرم کے لئے
سو گیا سارا جہاں آج بھی بے دار ہیں ہم
کربلا والوں کے۔۔۔

بہتے پانی میں کبھی آگ لگا دیتے ہیں
کبھی جلتے ہوئے شعلوں کو بجھا دیتے ہیں
ہم عزاداروں کے آنسوں یہ صدا دیتے ہیں
داور صبر کا منہ بولتا انکار ہیں ہم
کربلا والوں کے۔۔۔

غم دنیا کا کوئی غم نہیں کرتے ہم لوگ
رونق شمعِ عزا کم نہیں کرتے ہم لوگ
جب تلک شاہ کا ماتم نہیں کرتے ہم لوگ
ہوتا رہتا ہے یہ احساس کے بے کار ہیں ہم
کربلا والوں کے۔۔۔

یوں رش حملہء شبیر کہاں ختم ہوی
گرم یہ جزبہء زنجیر کہاں ختم ہوی
اب بھی زینب کی وہ تقریر کہاں ختم ہوی
وہی کوفہ ہے یہ دنیا وہی مختار ہیں ہم
کربلا والوں کے۔۔۔

جو دلوں میں غم سرور کی خلش رکھتا ہے
جیب میں مثل عطامیز تپش رکھتے ہیں
ہر نظر میں متوکل کی روش رکھتے ہیں
ایسے لوگوں سے ہر ایک حال میں بیزار ہیں ہم
کربلا والوں کے۔۔۔

کتنا نایاب ہے قرآن عزاداری کا
سب کو حاصل نہیں عرفان عزاداری کا
مرتبہ دیکھ مسلمان عزاداری کا
اک وفادار قبیلے کے عزادار ہیں ہم
کربلا والوں کے۔۔۔