NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Hussaina hussaina

Nohakhan: Azadari Murshidabad
Shayar: Najaf Murshidabadi


hussain bazm e jahan ko jaga ke soye hai
chiragh e quwwate baatil bujha ke soye hai
sitam ke qasr ko thokar se dha ke soye hai
udoo ke taygh talay muskurake soye hai
hussaina hussaina haye hussain hussaina

noha tha ye zainab e dilgeer ka
koi nahi sar pe raha aasra
waqt tha ye ahle haram pe kada
ghar bhara ujda chin gayi rida
hussaina hussaina...

dulha ka ran may hua tukde badan
dekh ke roya kiye shaahe zaman
ho gaya pamaal sheh ka gulbadan
tukde badan tha kaun utha'ta
hussaina hussaina...

aun o mohamad jo gire khaak par
raahe haq may ho gaye qurban pisar
pahunchi jo qaime may ye gham ki khabar
maa ne kiya tha shukr khuda ka
hussaina hussaina...

seene pe akbar ke jab barchi lagi
sakht thi boodhe pidar pe ye ghadi
kaandhe pe leke laashe jawan laal ki
thokare khaata qaime may pahuncha
hussaina hussaina...

rehm kha cheh maah ka bacha hai ye
bano ka bhi sab ka dulaara hai ye
pyaas se gehware may tadpa hai ye
pani mila na paas tha darya
hussaina hussaina...

nehr pe abbas ke shaane kate
baith gaye shaah kamar thaam ke
zainab o kulsum ne naale kiye
ghazi ka laasha dekh ke roya
hussaina hussaina...

qatl huwe kund churi se hussain
maadar e shabbir ye karti thi bain
kaise mile pyasi sakina ko chain
ahle haram ka tha yehi nauha
hussaina hussaina...

as-salaam ya hussain as-salaam
roze pe ek roz ho uska qayaam
dije najaf ko raza ay imam
ay mere maula ay mere aaqa
hussaina hussaina...

حسین بزم جہاں کو جگا کے سوے ہیں
چراغ قوت باطل بجھا کے سوے ہیں
ستم کے قصر کو ٹھوکر سے ڈھا کے سوے ہیں
عدو کے تیغ تلے مسکرا کے سوے ہیں
حسین حسین ہاے حسین حسین

نوحہ تھا یہ زینب دلگیر کا
کوئی نہیں سر پہ رہا آسرا
وقت تھا یہ أہل حرم پہ کڑا
گھر بھرا اجڑا چھن گئی ردا
حسین حسین۔۔۔

دولہا کا رن میں ہوا ٹکڑے بدن
دیکھ کے رویا کیے شاہ زمن
ہوگیا پامال شہ کا گل بدن
ٹکڑے بدن تھا کون اٹھاتا
حسین حسین۔۔۔

عون و محمد جو گرے خاک پر
راہ حق میں ہو گےء قرباں پسر
پہنچی جو خیمے میں یہ غم کی خبر
ماں نے کیا تھا شکر خدا کا
حسین حسین۔۔۔

سینے پہ اکبر کے جب برچی لگی
سخت تھی بوڑھے پدر پہ یہ گھڑی
کاندھے پہ لے کے لاشے جواں لال کی
ٹھوکریں کھاتا خیمے میں پہنچا
حسین حسین۔۔۔

رحم کھا چھ ماہ کا بچہ ہے یہ
بانو کا بھی سب کا دلارا ہے یہ
پیاس سے گہوارے میں تڑپا ہے یہ
پانی ملا نہ پاس تھا دریا
حسین حسین۔۔۔

نہر پہ عباس کے شانے کٹے
بیٹھ گےء شاہ کمر تھام کے
زینب و کلثوم نے نالے کیےء
غازی کا لاشہ دیکھ کے رویا
حسین حسین۔۔۔

قتل ہوے کند چھری سے حسین
مادر شبیر یہ کرتی تھی بین
کیسے ملے پیاسی سکینہ کو چین
أہل حرم کا تھا یہی نوحہ
حسین حسین۔۔۔

السلام یا حسین السلام
روضے پہ اک روز ہو اسکا قیام
دیجیے نجف کو رضا اے امام
اے میرے مولا اے میرے آقا
حسین حسین۔۔۔