NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Zainab ye boli

Nohakhan: Mustufa Mirza
Shayar: Najaf Murshidabadi


zainab ye boli ay mere bhai tumhare baad
qismat bhawar may zulm ke laayi tumhare baad

kooza sakina haath may hasrat se thaam kar
takti rahi thi suye taraai tumhare baad
zainab ye boli ay mere...
qismat bhawar may...

jis bhai se juda na hui bachpane se mai
sehni padi usi ki judaai tumhare baad
zainab ye boli ay mere...
qismat bhawar may...

naazon se jisko paala tha athara saal tak
mitti may mil gayi wo kamayi tumhare baad
zainab ye boli ay mere...
qismat bhawar may...

is peedi may hussain ne kadiyal jawan ki
kaandhe pe laash haye uthayi tumhare baad
zainab ye boli ay mere...
qismat bhawar may...

larzi zameen aur falak kaampne laga
jab halq e sheh pe taygh chalayi tumhare baad
zainab ye boli ay mere...
qismat bhawar may...

shimr e layeen ka jee na bhara sheh ko maar kar
qaimon may aake aag lagayi tumhare baad
zainab ye boli ay mere...
qismat bhawar may...

tu zinda jab talak raha parda bacha raha
na mehramon ke darmiyan aayi tumhare baad
zainab ye boli ay mere...
qismat bhawar may...

koi madad ke waaste aaya na aal ke
deti rahi mai ban may duhaai tumhare baad
zainab ye boli ay mere...
qismat bhawar may...

pahunchi najaf madine reha hoke qaid se
lekin mili na gham se rehaai tumhare baad
zainab ye boli ay mere...
qismat bhawar may...

زینب یہ بولی اے میرے بھائی تمہارے بعد
قسمت بھنور میں ظلم کے لای تمہارے بعد

کوزہ سکینہ ہاتھ میں حسرت سے تھام کر
تکتی رہی تھی سوے ترای تمہارے بعد
زینب یہ بولی اے میرے۔۔۔
قسمت بھنور میں۔۔۔

جس بھائی سے جدا نہ ہوی بچپنے سے می
سہنی پڑی اسی کی جدائی تمہارے بعد
زینب یہ بولی اے میرے۔۔۔
قسمت بھنور میں۔۔۔

نازوں سے جس کو پالا تھا اٹھارہ سال تک
مٹی میں مل گیء وہ کمای تمہارے بعد
زینب یہ بولی اے میرے۔۔۔
قسمت بھنور میں۔۔۔

اس پیڑی میں حسین نے کڑیل جوان کی
کاندھے پہ لاش ہاے اٹھای تمہارے بعد
زینب یہ بولی اے میرے۔۔۔
قسمت بھنور میں۔۔۔

لرزی زمین اور فلک کانپنے لگا
جب حلق شہ پہ تیغ چلای تمہارے بعد
زینب یہ بولی اے میرے۔۔۔
قسمت بھنور میں۔۔۔

شمر لعیں کا جی نہ بھرا شہ کو مار کر
خیموں میں آکے آگ لگای تمہارے بعد
زینب یہ بولی اے میرے۔۔۔
قسمت بھنور میں۔۔۔

تو زندہ جب تلک رہا پردہ بچا رہا
نہ محرموں کے درمیاں آی تمہارے بعد
زینب یہ بولی اے میرے۔۔۔
قسمت بھنور میں۔۔۔

کوی مدد کے واسطے آیا نہ آل کے
دیتی رہی میں بن میں دہائی تمہارے بعد
زینب یہ بولی اے میرے۔۔۔
قسمت بھنور میں۔۔۔

پہنچی نجف مدینے رہا ہوکے قید سے
لیکن ملی نہ غم سے رہائی تمہارے بعد
زینب یہ بولی اے میرے۔۔۔
قسمت بھنور میں۔۔۔