NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Syed hoo musafir hoo

Nohakhan: Rizwan Zaidi Party
Shayar: Rehaan Azmi


syed hoo musafir hoo ghareebul ghurba hoo
pyasa hoo kayi roz se be-jurm o khata hoo

maaro na mere saamne humshakle nabi ko
tadpao na ay shaamiyo farzande ali ko
abbas ke mar jaane se mai tooth gaya hoo
syed hoo musaafir hoo...

mai subho se ta asr uthata raha laashe
maqtal may hai be-goro kafan sab ke janaze
in laasho ke maidan may sar dhoond raha hoo
syed hoo musaafir hoo...

zainab ke dulaare jo gire khaak ke upar
kaandhe pe nahi godh may laaya hoo uthakar
wo mujhpe fida hogaye mai unpe fida hoo
syed hoo musaafir hoo...

allah tu shahid hai ajab zulm hua hai
ek laasha uthaya na gaya balke chuna hai
us laash ki gathri liye maqtal se chala hoo
syed hoo musaafir hoo...

abbas ke baazu na thay baazu thay wo mere
jo mashq bachane ke sabab kaate hai tumne
be-dast hoo kya jang karoo soch raha hoo
syed hoo musaafir hoo...

ye khoon jo chehre pe mere dekh rahe ho
ye kiska lahoo hai ye khudara nahi poocho
ye poocho ke kis tarha se mai zinda khada hoo
syed hoo musaafir hoo...

seene pe jo soti thi wo soyegi zameen par
maarega tamache usay ab shimre sitamgar
wo mujhko bhulaade ye dua maang raha hoo
syed hoo musaafir hoo...

tar khoon may rehaan hussain ibne ali thay
kehne lage abbas ke parcham ko utha ke
zainab ye qayanat mai tujhe saump raha hoo
syed hoo musaafir hoo...

سید ہوں مسافر ہوں غریب الغربا ہوں
پیاسہ ہوں کیء روز سے بے جرم و خطا ہوں

مارو نہ میرے سامنے ہمشکل نبی کو
تڑپاوء نہ اے شامیوں فرزند علی کو
عباس کے مر جانے سے میں ٹوٹ گیا ہوں
سید ہوں مسافر ہوں۔۔۔

میں صبح سے تا عصر اٹھاتا رہا لاشے
مقتل میں ہیں بے گور و کفن سب کے جنازے
ان لاشوں کے میدان میں سر ڈھونڈ رہا ہوں
سید ہوں مسافر ہوں۔۔۔

زینب کے دلارے جو گرے خاک کے اوپر
کاندھے پہ نہیں گود میں لایا ہوں اٹھا کر
وہ مجھ پہ فدا ہوگیا میں ان پہ فدا ہوں
سید ہوں مسافر ہوں۔۔۔

اللہ تو شاہد ہے عجب ظلم ہوا ہے
اک لاش اٹھایا نہ گیا بلکہ چنا ہے
اس لاش کی گٹھری لیے مقتل سے چلا ہوں
سید ہوں مسافر ہوں۔۔۔

عباس کے بازو نہ تھے بازو تھے وہ میرے
جو مشک بچانے کے سبب کاٹے ہیں تم نے
بے دست ہوں کیا جنگ کروں سونچ رہا ہوں
سید ہوں مسافر ہوں۔۔۔

یہ خون جو چہرے پہ میرے دیکھ رہے ہو
یہ کس کا لہو ہے یہ خدارا نہیں پوچھو
یہ پوچھو کہ کس طرح سے میں زندہ کھڑا ہوں
سید ہوں مسافر ہوں۔۔۔

سینے پہ جو سوتی تھی وہ سوے گی زمیں پر
مارے گا طمانچے اسے اب شمر ستمگر
وہ مجھکو بھلادے یہ دعا مانگ رہا ہوں
سید ہوں مسافر ہوں۔۔۔

تر خون میں ریحان حسین ابنِ علی تھے
کہنے لگے عباس کے پرچم کو اٹھا کے
زینب یہ قیانت میں تجھے سونپ رہا ہوں
سید ہوں مسافر ہوں۔۔۔