NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Sina ki nok pe

Nohakhan: Muzammil Mirza
Shayar: Ather Murshidabadi


sina ki nok pe bhi shaah sar utha ke chale
jahan ko taaqat e haq kya hai ye dikha ke chale

hussain dasht may ghar apna go luta ke chale
nabi ke deen ki qismat magar bana ke chale
sina ki nok pe...

usi ke qadmon se jannat lipat ke rehti hai
misaal e hurr jo muqaddar ko khud bana ke chale
sina ki nok pe...

jahan ne dekh liya teer e hurmula ka asar
gale pe leke jo baysheer muskura ke chale
sina ki nok pe...

hame kate hue baazu ki yaad aane lagi
hum apne haath may jab bhi alam utha ke chale
sina ki nok pe...

hussain kehte thay akbar hai ab andhera jahan
tum apne seene pe zakhme sina jo khaake chale
sina ki nok pe...

ghashi ke haal may abid ka jal gaya bistar
jab aag qaime be-daar gar laga ke chale
sina ki nok pe...

bandhe thay gardan o baazu haram ke rassi se
sitam ki inteha ahle sitam dikha ke chale
sina ki nok pe...

yazeed naam zamane may ho gaya laanat
hussain is tarha ather usay mita ke chale
sina ki nok pe...

سناں کی نوک پہ بھی شاہ سر اٹھا کے چلے
جہاں کو طاقت حق کیا ہے یہ دکھا کے چلے

حسین دشت میں گھر اپنا گو لٹا کے چلے
نبی کے دین کی قسمت مگر بنا کے چلے
سناں کی نوک پہ۔۔۔

اسی کے قدموں سے جنت لپٹ کے رہتی ہے
مثال حر جو مقدر کو قد بنا کے چلے
سناں کی نوک پہ۔۔۔

جہاں نے دیکھ لیا تیر حرملہ کا اثر
گلے پہ لے کے جو بے شیر مسکراکے چلے
سناں کی نوک پہ۔۔۔

ہمیں کٹے ہوئے بازو کی یاد آنے لگی
ہم اپنے ہاتھ میں جب بھی الم اٹھا کے چلے
سناں کی نوک پہ۔۔۔

حسین کہتے تھے اکبر ہے اب اندھیرا جہاں
تم اپنے سینے پہ زخم سناں جو کھاکے چلے
سناں کی نوک پہ۔۔۔

غشی کے حال میں عابد کا جل گیا بستر
جب آگ خیمے بے داد گر لگا کے چلے
سناں کی نوک پہ۔۔۔

بندھے تھے گردن و بازو حرم کے رسی میں
ستم کی انتہا اہل ستم دکھا کے چلے
سناں کی نوک پہ۔۔۔

یزید نام زمانے میں ہوگیا لعنت
حسین اس طرح اطہر اسے مٹا کے چلے
سناں کی نوک پہ۔۔۔