NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Sakina yaad aati

Nohakhan: Rizwan Zaidi
Shayar: Rehaan Azmi


rehaai milgayi zainab abhi yaadon ki qaidi hai
watan to aagayi maa ki lehad par bain karti hai
amanat apne bhai ki pase zindan chod aayi
sakina ab andheri qabr may kis tarha soti hai
sakina yaad aati hai sakina yaad aati hai

hawaein shaam aati hai to zainab chaunk jaati hai
sakina yaad aati hai
phupi bemaar sughra ko agar pani pilaati hai
sakina yaad aati hai

alam abbas ka dekhe to palkein bheeg jaati hai
ali akbar ke hujre may kayi yaadein satati hai
kisi bachi ke kaano may nazar baali jo aati hai
sakina yaad aati hai
hawaein shaam aati hai...

lehad pe maa ki jab dukhda sunane ke liye jaye
aziyat patharon ki aur kabhi zindan yaad aaye
na jaane rote rote kyon har ek gham bhool jaati hai
sakina yaad aati hai
hawaein shaam aati hai...

wuzu karte huye pani ki thandak se larazti hai
falak par abid ab dekhe to shehzadi ye kehti hai
madine may ye baarish to baras ke dil dukhaati hai
sakina yaad aati hai
hawaein shaam aati hai...

bahot yaadein bahot baatein abhi seene may baakhi hai
rasan ke daagh durro ke nishan seene may baakhi hai
tasavvur may ali asghar ko jab jhoola jhulaati hai
sakina yaad aati hai
hawaein shaam aati hai...

koi zindan ka dar khulne ka khissa bhi na dohraye
kahin aisa na ho gham se meri dhadkan hi ruk jaye
rehaai ki ghadi may hind jab chaadar udaati hai
sakina yaad aati hai
hawaein shaam aati hai...

kabhi sughra jo seene se lipat kar sone lagti hai
behan abbas e ghazi tadap ke rone lagti hai
kabhi shabbir ka seena kabhi ghurbat rulaati hai
sakina yaad aati hai
hawaein shaam aati hai...

kabhi abid se chupti hai kabhi umme sakina se
palat kar aayi hai jabse rehaai paake zindan se
rehaai paane walon se kahan nazrein milaati hai
sakina yaad aati hai
hawaein shaam aati hai...

nigahein phayr leti hai agar baqar nazar aaye
agar baaton hi baaton may rasan ka zikr aajaye
to aankhein bandh karke khaak par wo baith jaati hai
sakina yaad aati hai
hawaein shaam aati hai...

na bhooli hai na bhoolegi kabhi bazaar ka manzar
baraste thay aseeron ke saron par jis ghadi pathar
watan aakar bhi ek nanhi lehad khaabon may aati hai
sakina yaad aati hai
hawaein shaam aati hai...

kabhi rehaan aur rizwan jaana qabre zainab par
nazar aayega tumko dard may dooba ye ek manzar
musalsal qabre zainab se yehi awaaz aati hai
sakina yaad aati hai
hawaein shaam aati hai...

رہای مل گیء زینب ابھی یادوں کی قیدی ہے
وطن تو آگیء ماں کی لحد پر بین کرتی ہے
امانت اپنے بھائی کی پس زندان چھوڑ آی
سکینہ اب اندھیری قبر میں کس طرح سوتی ہے
سکینہ یاد آتی ہے سکینہ یاد آتی ہے

ہوایں شام آتی ہیں تو زینب چونک جاتی ہے
سکینہ یاد آتی ہے
پھپھی بیمار صغرا کو اگر پانی پلاتی ہے
سکینہ یاد آتی ہے

الم عباس کا دیکھے تو پلکیں بھیگ جاتی ہیں
علی اکبر کے ہجرے میں کیء یادیں ستاتی ہیں
کسی بچی کے کانوں میں نظر بالی جو آتی ہے
سکینہ یاد آتی ہے
ہوایں شام آتی ہی۔۔۔

لحد پہ ماں کی جب دکھڑا سنانے کے لئے جاے
اذیت پتھروں کی اور کبھی زندان یاد آے
نہ جانے روتے روتے کیوں ہر اک غم بھول جاتی ہے
سکینہ یاد آتی ہے
ہوایں شام آتی ہی۔۔۔

وضو کرتے ہوئے پانی کی ٹھنڈک سے لرزتی ہے
فلک پر عابد اب دیکھے تو شہزادی یہ کہتی ہے
مدینے میں یہ بارش تو برس کے دل دکھاتی ہے
سکینہ یاد آتی ہے
ہوایں شام آتی ہی۔۔۔

بہت یادیں بہت باتیں ابھی سینے میں باقی ہیں
رسن کے داغ دروں کے نشاں سینے میں باقی ہے
تصور میں علی اصغر کو جب جھولا جھلاتی ہے
سکینہ یاد آتی ہے
ہوایں شام آتی ہی۔۔۔

کوئی زنداں کا در کھلنے کا قصہ بھی نہ دہراے
کہیں ایسا نہ ہو غم سے میری دھڑکن ہی رک جائے
رہای کی گھڑی میں ہند جب چادر اڑاتی ہے
سکینہ یاد آتی ہے
ہوایں شام آتی ہی۔۔۔

کبھی صغرا جو سینے سے لپٹ کر سونے لگتی ہے
بہن عباس غازی تڑپ کے رونے لگتی ہے
کبھی شبیر کا سینہ کبھی غربت رلاتی ہے
سکینہ یاد آتی ہے
ہوایں شام آتی ہی۔۔۔

کبھی عابد سے چھپاتی ہے کبھی ان سکینہ سے
پلٹ کر آی ہے جب سے رہائی پاک زنداں سے
رہائی پانے والوں سے کہاں نظریں ملاتی ہے
سکینہ یاد آتی ہے
ہوایں شام آتی ہی۔۔۔

نگاہیں پھیر لیتی ہے اگر باقر نظر آے
اگر باتوں ہی باتوں میں رسن کا ذکر آجاے
تو آنکھیں بند کرکے خاک پر وہ بیٹھ جاتی ہے
سکینہ یاد آتی ہے
ہوایں شام آتی ہی۔۔۔

نہ بھولی ہے نہ بھولے گی کبھی بازار کا منظر
برستے تھے اسیروں کے سروں پر جس گھڑی پتھر
وطن آکر بھی ایک ننھی لحد خوابوں میں آتی ہے
سکینہ یاد آتی ہے
ہوایں شام آتی ہی۔۔۔

کبھی ریحان اور رضوان جانا قبر زینب پر
نظر آے گا تم کو درد میں ڈوبا یہ ایک منظر
مسلسل قبر زینب سے یہی آواز آتی ہے
سکینہ یاد آتی ہے
ہوایں شام آتی ہی۔۔۔