NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Nabi ki fikr

Nohakhan: Ghulam Hussain
Shayar: Shafiq


nabi ki fikr ali ka jalaal hai zainab

na hoti ye to adhoori thi karbala e hussain
buland ab bhi fiza may hai ye sada e hussain
yehi to hai ba-khuda baani e aza e hussain
meri shareek mera ham khayal hai zainab
nabi ki fikr ali ka jalaal...

qadam qadam pe musibat hai aur pareshani
shikast zulm ke haaton magar nahi maani
aseer kunbe ki karti rahi nigehbani
jawan hai azme faza phir nidhaal hai zainab
nabi ki fikr ali ka jalaal...

hussain charke sadaqat ye aaftabe wafa
hussain deen ki baqa hai hussainiyat ki baqa
dayare koofa o darbare shaam may ba-khuda
namoona e asade zuljalaal hai zainab
nabi ki fikr ali ka jalaal...

watan se door gham o aansu aur bechaini
na poochiye ke ghareebul watan pe kya guzri
uthaye kis tarha zindan e shaam ki sakhti
aseer zulm sitam khastajan hai zainab
nabi ki fikr ali ka jalaal...

nigahe dehr na dekhi na aisi qurbani
hua na saani e zehra ka phir koi saani
ghame hussain ki surat hai ye wila faani
baqa hussain ko hai la zawal hai zainab
nabi ki fikr ali ka jalaal...

hai sabr o shukr ka andaz sayyeda ki tarha
amal ki raah may tewar hai murtaza ki tarha
sifaat o azm hai abbas ba-wafa ki tarha
hussain hi ki tarha be-misaal hai zainab
nabi ki fikr ali ka jalaal...

khuli jo aankh to sadma uthaya madar ka
shafiq baap ka sadma kabhi biradar ka
musafirat ne diya daagh phir bahattar ka
azal se hi ba-khuda pur malaal hai zainab
nabi ki fikr ali ka jalaal...

نبی کی فکر علی کا جلال ہے زینب

نہ ہوتی یہ تو ادھوری تھی کربلاے حسین
بلند اب بھی فضہ میں ہے یہ صداے حسین
یہی تو ہے با خدا بانیء عزا حسین
میری شریک میرا ہم خیال ہے زینب
نبی کی فکر علی کا جلال۔۔۔

قدم قدم پہ مصیبت ہے اور پریشانی
شکست ظلم کے ہاتھوں مگر نہیں مانی
اسیر کنبے کی کرتی رہی نگہبانی
جواں ہے عظم فضا پھر نڈھال ہے زینب
نبی کی فکر علی کا جلال۔۔۔

حسین چرخے صداقت یہ آفتاب وفا
حسین دین کی بقا حسینیت کی بقا
دیارے کوفہ و دربار شام میں با خدا
نمونہء اسد ذوالجلال ہے زینب
نبی کی فکر علی کا جلال۔۔۔

وطن سے دور غم و آنسوں اور بے چینی
نہ پوچھیے کے غریب الوطن پہ کیا گزری
اٹھاے کس کو زندان شام کی سختی
اسیر ظلم ستم خستہ جان ہے زینب
نبی کی فکر علی کا جلال۔۔۔

نگاہ دہر نہ دیکھی نہ ایسی قربانی
ہوا نہ ثانی ء زہرا کا پھر کوئی ثانی
غم حسین کی صورت ہے یہ ولا فانی
بقا حسین کو ہے لا زوال ہے زینب
نبی کی فکر علی کا جلال۔۔۔

ہے صبر و شکر کا انداز سیدہ کی طرح
عمل کی راہ میں تیور ہے مرتظی کی طرح
صفات و عظم ہے عباس با وفا کی طرح
حسین ہی کی طرح بے مثال ہے زینب
نبی کی فکر علی کا جلال۔۔۔

خولی جو آنکھ تو صدمہ اٹھایا مادر کا
شفیق باپ کا صدمہ کبھی برادر کا
مسافرت نے دیا داغ پھر بہتر کا
اذل سے ہی با خدا پر ملال ہے زینب
نبی کی فکر علی کا جلال۔۔۔