NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Yehi hai sakina

Nohakhan: Sibte Jafar
Shayar: Sibte Jafar


yehi hai sakina yehi fatema hai
yehi dukhtare shaahe karbobala hai
yehi hai ruqayya yehi sayyeda hai
yehi hai sakina...

ye baba ke seene pa hai sone wali
ye chup chup ke zindan may hai rone wali
isi se hai nauha isi se aza hai
yehi hai sakina...

madine se nikli bhare ghar ke hamraah
magar rehgayi shaam may jaake tanha
phuphi ko wahan jaake kehna pada hai
yehi hai sakina...

mazaalim ki rudaad isne sunaai
isi ne haram ko rihaai dilaayi
magar khud ye ab tak aseere bala hai
yehi hai sakina...

kabhi taziyana kabhi sayliyan hai
tamache layeeno ke aur ghurkiya hai
ye iske khilaune ye aab o ghiza hai
yehi hai sakina...

watan ko chale sab siwaye sakina
ye mazloom bachi na pahunchi madina
kahan shaam o kufa kahan karbala hai
yehi hai sakina...

phuphi maa bahan aur laachar beeran
bandhe sab ke baazu to bachi ki gardan
galay se sakina ke khoon ris raha hai
yehi hai sakina...

rahe raunaqe majlise sheh ki khaayam
rahe jaari o saari matam bhi khaayam
yehi sibte jaffar ke dil ki sada hai
yehi hai sakina...

یہی ہے سکینہ یہی فاطمہ ہے
یہی دُخترِ شاہِ کرب و بلا ہے
یہی ہے رُقیہ یہی سیدہ ہے
یہی ہے سکینہ۔۔۔

یہ بابا کے سینے پہ ہے سونے والی
یہ چھُپ چھُپ کے زنداں میں ہے رونے والی
اسی سے ہے نوحہ اسی سے اعزا ہے
یہی ہے سکینہ۔۔۔

مدینے سے نکلی بھرے گھر کے ہمراہ
مگر رہ گئی شام میں جا کہ تنہا
پھُوپھی کو وہاں جا کے کہنا پڑا ہے
یہی ہے سکینہ۔۔۔

مظالم کی رُوداد اس نے سُنائی
اسی نے حرم کو رہائی دلائی
مگر خود یہ اب تک اسیرِبلا ہے
یہی ہے سکینہ۔۔۔

کبھی تعزیانہ کبھی سیلیاں ہیں
تماچے لعینوں کے اور گھُرکیاں ہیں
یہ اس کے کھلونے یہ آب و غذا ہے
یہی ہے سکینہ۔۔۔

وطن کو چلے سب سوائے سکینہ
یہ مظلوم بچی نہ پہنچی مدینہ
کہاں شام و کوفہ کہاں کربلا ہے
یہی ہے سکینہ۔۔۔

پھُوپھی ماں بہن اور لاچار بیرن
بندھے سب کے بازو تو بچی کی گردن
گلے سے سکینہ کے خوں رِس رہا ہے
یہی ہے سکینہ۔۔۔

رہیں رونقیں مجلسِ شہہ کی قائم
رہے جاری و ساری ماتم بھی قائم
یہی سبطِ جعفر کے دل کی صدا ہے
یہی ہے سکینہ۔۔۔