NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Maine ay sughra

Nohakhan: Munawar Ali
Shayar: Najaf Murshidabadi


maine ay sughra andheron se rifaqat kar li
qaid e zindan may sakina ye sada deti thi

jabse baba ka behan seena hua mujhse juda
mar gayi seene may umeed mere jeene ki
maine ay sughra...
qaid e zindan may...

neele rukhsar tere hote behan meri tarha
ye to acha hi hua tum na yahan par aayi
maine ay sughra...
qaid e zindan may...

meri awaaz bhi hai meri tarha qaid may ab
bas isi tarha se ab qaid may mar jaungi
maine ay sughra...
qaid e zindan may...

neend jab aati nahi qaid e sitam may khwahar
loriyan yaad bahot aati hai mujhko maa ki
maine ay sughra...
qaid e zindan may...

garche khaaliq ki har ek shay hai mujhe yaad magar
roshni cheez hai kya ab to yahan bhool gayi
maine ay sughra...
qaid e zindan may...

tum ko mai dukhda sunaungi gale se lag kar
qaid se jald rihaai ki ho surat sab ki
maine ay sughra...
qaid e zindan may...

ab to zindan ki tareeki ka hai saath mera
roshni yaad nahi ab mujhe madine ki
maine ay sughra...
qaid e zindan may...

ab mayassar hai mujhe khaak ka takiya bistar
chain ki neend madine may mujhe aati thi
maine ay sughra...
qaid e zindan may...

apne hi qadmon ki aahat se seham jaati hoo
is khadar hai dar o deewar se wehshat taari
maine ay sughra...
qaid e zindan may...

din bhi rehta hai yahan chadare zulmat odhe
kya bayan shab ke andhere ka kare yan koi
maine ay sughra...
qaid e zindan may...

khushk lab yaad sakina ke mujhe aaye najaf
qalb do paara hua aagayi ankhon may nami
maine ay sughra...
qaid e zindan may...

میں نے اے صغرا اندھیروں سے رفاقت کرلی
قید زنداں میں سکینہ یہ صدا دیتی تھی

جب سے بابا کا بہن سینہ ہوا مجھ سے جدا
مر گیء سینے میں امید میرے جینے کی
میں نے اے صغرا۔۔۔
قید زنداں میں۔۔۔

نیلے رخسار تیرے ہوتے بہن میری طرح
یہ تو اچھا ہی ہوا تم نہ یہاں پر آی
میں نے اے صغرا۔۔۔
قید زنداں میں۔۔۔

میری آواز بھی ہے میری طرح قید میں اب
بس اسی طرح سے اب قید میں مر جاؤں گی
میں نے اے صغرا۔۔۔
قید زنداں میں۔۔۔

نیند جب آتی نہیں قید ستم میں خواہر
لوریاں یاد بہت آتی ہیں مجھکو ماں کی
میں نے اے صغرا۔۔۔
قید زنداں میں۔۔۔

گرچہ خالق کی ہر ایک شہ ہے مجھے یاد مگر
روشنی چیز ہے کیا اب تو یہاں بھول گیء
میں نے اے صغرا۔۔۔
قید زنداں میں۔۔۔

تم کو میں دکھڑا سناؤں گی گلے سے لگا کر
قید سے جلد رہائی کی ہو صورت سب کی
میں نے اے صغرا۔۔۔
قید زنداں میں۔۔۔

اب تو زندان کی تاریکی کا ہے ساتھ میرا
روشنی یاد نہیں اب مجھے مدینے کی
میں نے اے صغرا۔۔۔
قید زنداں میں۔۔۔

اب میسر ہے مجھے خاک کا تکیہ بستر
چین کی نیند مدینے میں مجھے آتی تھی
میں نے اے صغرا۔۔۔
قید زنداں میں۔۔۔

اپنے ہی قدموں کی آہٹ سے سہم جاتی ہوں
اس قدر ہے در و دیوار سے وحشت طاری
میں نے اے صغرا۔۔۔
قید زنداں میں۔۔۔

دن بھی رہتا ہے یہاں چادر ظلمت اوڑھے
کیا بیاں شب کے اندھیرے کا کرے یاں کوئی
میں نے اے صغرا۔۔۔
قید زنداں میں۔۔۔

خشک لب یاد سکینہ کے مجھے آے نجف
قلب دو پارہ ہوا آگیء آنکھوں میں نمی
میں نے اے صغرا۔۔۔
قید زنداں میں۔۔۔