NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Haye ali akbar

Nohakhan: Nazeer Irani
Shayar: Aashiq Irani


baap se maange ijazat ran ki jab kadiyal jawan
thaam kar dil shaah bole pehle do akbar azan
rodiye kauno makan jab kaha wo naujawan
allahu akbar allhu akbar

khoon may doobi ali akbar ki jab aayi sada
ladkhadate suye maqtal chal diye shaahe huda
haye ali akbar haye ali akbar

pahonch kar dekha ali akbar ka sheh ne haale zaar
seene may barchi gadi hai dard se hai be-qaraar
haye ali akbar...

seena e akbar se barchi ko nikale jab hussain
sheh ke qaime se utha wa akbara ka shor o shain
haye ali akbar...

gul hua pal bhar may laila ki umeedon ka charaagh
rehgaya ek maa ke dil may hasrat o armaan ka daagh
haye ali akbar...

sheh ki nazron may hui tareek aashiq kayenaat
sar jhuka kar ro rahe hai hoor o hilma ek saath
haye ali akbar...

باپ سے مانگے اجازت رن کی جب کڑیل جواں
تھام کر دل شاہ بولے پہلے دو اکبر اذاں
رو دیےء کون و مکاں جب کہا وہ نوجواں
اللہ اکبر اللّٰہ اکبر

خون میں ڈوبی علی اکبر کی جب آی صدا
لڑکھڑاتے سوے مقتل چل دیےء شاہ ہدا
ہاے علی اکبر ہاے علی اکبر

پہنچ کر دیکھا علی اکبر کا شہ نے حال زار
سینے میں برچی گڑی ہے درد سے ہے بیقرار
ہاے علی اکبر۔۔۔

سینۂ اکبر سے برچی کو نکالے جب حسین
شہ کے خیمے سے اٹھا وا اکبر کا شورو شین
ہاے علی اکبر۔۔۔

گل ہوا پل بھر میں لیلیٰ کی امیدوں کا چراغ
رہ گیا اک ماں کے دل میں حسرت و ارماں کا داغ
ہاے علی اکبر۔۔۔

شہ کی نظروں میں ہوئی تاریخ عاشق کاینات
سر جھکا کر رو رہے ہیں حور و غلماں ایک ساتھ
ہاے علی اکبر۔۔۔