NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ay shimr mere laal

Nohakhan: Mir Rehan Abbas
Shayar: Mubarak Jalalpuri


bole shabbir ke sarwar ko sambhalo amma
aakhri baar kaleje se lagalo amma

sunke bete ki sada aagayi khatoon e jina
dasht may kehne lagi maa hai mera laal kahan

bikhraye baal kehti hai jangal may fatema
ay shimr mere laal ko aise na zibha kar

paala hai chakki pees ke maine hussain ko
do boondh pani dede zara noor e ain ko
hai teen din se khushk gala wa musibata
ay shimr mere laal ko...

mai maa hoo mere saamne mat qatl kar isay
sookha gala hai kis tarha khanjar tera chale
manzar ye dekh dekh ke rote hai mustafa
ay shimr mere laal ko...

maloom tha ki hogi shahadat hussain ki
maloom tha ke jaan na bachegi pisar teri
aise koi bhi qatl nahi aaj tak hua
ay shimr mere laal ko...

itne badan may teer chube hai mai kya karoo
mai kaunsa badan se bhala teer khaynch loo
aisa chuba hai teer ke hilta nahi zara
ay shimr mere laal ko...

mayyat utha chuka hai bahattar ki laadla
akbar ke khoon may doob gayi shaah ki aba
uski jabeen se khoon hai baysheer ka laga
ay shimr mere laal ko...

mai isko dekh dekh ke roti rahi sada
jab jab bhi choomti thi mai halqoom shaah ka
amma na roiye yehi kheta tha baareha
ay shimr mere laal ko...

shabbir qatl hogaye mai dekhti rahi
sheh ki zameen garm pa mayyat padi rahi
chalees roz dhoop may laasha pada raha
ay shimr mere laal ko...

allah karbala ko mubarak agar gaya
tadpega dekh dekh ke rauza hussain ka
rehan hai yaqeen ke goonjegi ek sada
ay shimr mere laal ko...

بولے شبیر کے سرور کو سنبھالو اماں
آخری بار کلیجے سے لگا لو اماں

سن کے بیٹے کی صدا آگیء خاتون جناں
دشت میں کہنے لگی ماں ہے میرا لال کہاں

بکھراے بال کہتی ہے جنگل میں فاطمہ
اے شمر میرے لال کو ایسے نہ زبح کر

پالا ہے چکی پیس کے میں نے حسین کو
دو بوندھ پانی دیدے زرا نور عین کو
ہے تین دن سے خشک گلا وامصیبتا
---اے شمر میرے لال کو

میں ماں ہوں میرے سامنے مت قتل کر اسے
سوکھا گلا ہے کس طرح خنجر تیرا چلے
منظر یہ دیکھ دیکھ کے روتے ہیں مصطفیٰ
---اے شمر میرے لال کو

معلوم تھا کہ ہوگی شہادت حسین کی
معلوم تھا نہ جان بچےگی پسر تیری
ایسا کوئی بھی قتل نہیں آج تک ہوا
---اے شمر میرے لال کو

اتنے بدن میں تیر چبھے ہیں میں کیا کروں
میں کونسا بدن سے بھلا تیر کھینچ لوں
ایسا چھبا ہے تیر کے ہلتا نہیں زرا
---اے شمر میرے لال کو

میت اٹھا چکا ہے بہتر کی لاڈلا
اکبر کے خوں میں ڈوب گیء شاہ کی عبا
اسکی جبیں سے خون ہے بے شیر کا گلا
---اے شمر میرے لال کو

میں اسکو دیکھ دیکھ کے روتی رہی سدا
جب جب بھی چومتی تھی میں حلقوم شاہ کا
اماں نہ رویےء یہی کہتا تھا بارہا
---اے شمر میرے لال کو

شبیر قتل ہوگئے میں دیکھتی رہی
شہ کی زمین گرم پہ میت پڑی رہی
چالیس روز دھوپ میں لاشہ پڑا رہا
---اے شمر میرے لال کو

اللہ کربلا کو مبارک اگر گیا
تڑپے گا دیکھ دیکھ کے روضہ حسین کا
ریحان ہے یقین کہ گونجے گی اک صدا
---اے شمر میرے لال کو