NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Shame ghariban

Nohakhan: Mir Mohsin Ali
Shayar: Zulfiqar Ahmed


baad e hussain dasht may mehshar bapa hua
chane laga har simt se ghan ghor andhera
qaime jale ridayein chini haye kya hua
pardes may loota gaya zahra ka gharana
aayi shaam e ghariban

kya gham ka hai samaa aayi shaam e ghariban

laashe pe jawan laal ke kehti rahi bano
sehra bhi tera dekh na paayi tu chal basa
kya gham ka hai samaa...
aayi shaam e ghariban…

jalte hue qaimon se jo uth'ta raha dhuan
hairan o pareshan tha shabbir ka kunba
kya gham ka hai samaa...
aayi shaam e ghariban…

laashe ke tukde bikhre pade thay zameen par
pamaal is tarha hua dulhe ka sarapa
kya gham ka hai samaa...
aayi shaam e ghariban…

bhai ko apne dhoondti thi dashte bala may
haaton may liye pani ke kooze ko sakina
kya gham ka hai samaa...
aayi shaam e ghariban…

barsa rahe thay jism pe bemaar ke kode
is aalam e ghurbat may kiya shukr ka sajda
kya gham ka hai samaa...
aayi shaam e ghariban…

ye keh rahi thi shaah ki khwahar labe furaat
abbas dekho sar se meri chin gayi rida
kya gham ka hai samaa...
aayi shaam e ghariban…

naize chubote jaate thay durre lagate thay
aale nabi pe hoti rahi raat bhar jafa
kya gham ka hai samaa...
aayi shaam e ghariban…

ahmed ye shaam roze qayamat se kam nahi
mohsin jo qaid hogaya ahmed ka gharana
kya gham ka hai samaa...
aayi shaam e ghariban…

بعدِ حسین دشت میں محشر بپا ہوا
چھانے لگا ہر سمت سے جہاں گور اندھیرا
خیمے جلے ردائیں چھِنی ہائے کیا ہوا
پردیس میں لُوٹا گیا زہرا کا گھرانہ
آئی شامِ غریباں

کیا غم کا ہے سماں آئی شامِ غریباں

لاشے پہ جواں لال کے کہتی رہی بانو
سہرا بھی تیرا دیکھ نہ پائی تُو چل بسا
کیا غم کا ہے سماں۔۔۔
آئی شامِ غریباں۔۔۔

جلتے ہوئے خیموں سے اُٹھتا رہا دھواں
حیران و پریشان تھا شبیر کا کنبہ
کیا غم کا ہے سماں۔۔۔
آئی شامِ غریباں۔۔۔

لاشِ کے ٹکڑے بکھرے پڑے تھے زمیں پر
پامال اس طرح ہوا دولہے کا سراپا
کیا غم کا ہے سماں۔۔۔
آئی شامِ غریباں۔۔۔

بھائی کو اپنے ڈھونڈتی تھی دشتِ بھلا میں
ہاتھوں میں لیے پانی کے کوزے کا سکینہ
کیا غم کا ہے سماں۔۔۔
آئی شامِ غریباں۔۔۔

برسا رہے تھے جسم پہ بیمار کے کوڑے
اس عالمِ غربت میں کیا شکر کا سجدہ
کیا غم کا ہے سماں۔۔۔
آئی شامِ غریباں۔۔۔

یہ کہہ رہی تھی شاہ کی خواہر لبِ فرات
عباس دیکھو سر سے میری چھِن گئی چادر
کیا غم کا ہے سماں۔۔۔
آئی شامِ غریباں۔۔۔

نیزے چُبھوتے جاتے تھے دُرّے لگاتے جاتے تھے
آلِ نبی پہ ہوتی رہی رات بھر جفا
کیا غم کا ہے سماں۔۔۔
آئی شامِ غریباں۔۔۔

احمد یہ شام روزِ قیامت سے کم نہیں
محسن جو قید ہو گیا احمد کا گھرانہ
کیا غم کا ہے سماں۔۔۔
آئی شامِ غریباں۔۔۔