NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Jhoola veeran hua

Nohakhan: Mir Mohsin Ali
Shayar: Zulfiqar Ahmed


jhoola veeran hua hai mera asghar na raha
dil pe sadma hai bada mera asghar na raha

baad tere mujhe ab neend nahi aati hai
chain ab bali sakina bhi nahi paati hai
kaisi aayi ye khaza haye haye
mera asghar na raha
jhoola veeran hua…

boondh pani ke aewaz tujhko mila teere sitam
zulm ne baandhe rasan kaise karoo tera gham
doo mai ab kisko sada
mera asghar na raha
jhoola veeran hua…

ab bhi khaabon may mere hasta hua aata hai
tab kahin jaake mera dil bhi sukoon paata hai
meri aankhon ki ziya
mera asghar na raha
jhoola veeran hua…

aaja aghosh may mai tujhko chupa loo beta
apne bahon may tujhe jhoola jhulaun beta
ye sitam mujhpe hua
mera asghar na raha
jhoola veeran hua....

jab mai jaungi madine to kahoo kya dilbar
pooche gar sughra kahan hai mera bhaiya asghar
kya kahoo us se bhala
mera asghar na raha
jhoola veeran hua…

kaise manzar wo bhula payegi maadar beta
tere seene pe jo maara tha layeen ne naiza
zibha to laal hua
mera asghar na raha
jhoola veeran hua…

waada hai tujhse mera saaye may na baithungi
gham may ay laal tere har ghadi mai roungi
meri jaan tujhpe fida
mera asghar na raha
jhoola veeran hua…

darde dil uska bhala kaise ho ahmed se rakhm
na bhula payega mohsin ye jahan uska gham
thi ye ek maa ki sada
mera asghar na raha
jhoola veeran hua…

جھولا ویران ہوا ہے میرا اصغر نہ رہا
دل پہ صدمہ ہے بڑا میرا اصغر نہ رہا

بعد تیرے مجھے اب نیند نہیں آتی ہے
چین اب بالی سکینہ بھی نہیں پاتی ہے
کیسی آئی یہ قضا ہائے ہائے
میرا اصغر نہ رہا
جھولا ویران ہوا ۔۔۔

بوند پانی کے ایوز تجھکو ملا تیرِ ستم
ظلم نے باندھے رسن کیسے کروں تیرا غم
دوں میں اب کس کو صدا
میرا اصغر نہ رہا
جھولا ویران ہوا ۔۔۔

اب بھی خوابوں میں میرے ہنستا ہوا آتا ہے
تب کہیں جا کے میرا دل بھی سکوں پاتا ہے
میری آنکھوں کی ضیائ
میرا اصغر نہ رہا
جھولا ویران ہوا ۔۔۔

آ جائو آغوش میں تجھ کو میں چھُپا لوں بیٹا
اپنے بانہوں میں تجھے جھولا جھُلائوں بیٹا
یہ ستم مجھ پہ ہوا
میرا اصغر نہ رہا
جھولا ویران ہوا ۔۔۔

جب میں جائوں گی مدینے تو کہوں کیا دلبر
پوچھے گر صغریٰ کہاں ہے میرا بھیا اصغر
کیا کہوں اُس سے بھلا
میرا اصغر نہ رہا
جھولا ویران ہوا ۔۔۔

کیسے منظر وہ بھُلا پائے گی مادر بیٹا
تیرے سینے پہ جو مارا تھا لعیں نے نیزہ
ذبح تو لال ہوا
میرا اصغر نہ رہا
جھولا ویران ہوا ۔۔۔

وعدہ ہے تجھ سے میرا سائے میں نہ بیٹھوں گی
غم میں اے لال تیرے ہر گھڑی میں روئوں گی
میری جان تجھ پہ فدا
میرا اصغر نہ رہا
جھولا ویران ہوا ۔۔۔

دردِ دل اُس کا بھلا کیسے ہو احمد سے رقم
نہ بھُلا پائے گا محسن یہ جہاں اُس کا غم
تھی یہ اک ماں کی صدا
میرا اصغر نہ رہا
جھولا ویران ہوا ۔۔۔