NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Kaun qaail tha

Nohakhan: Nadeem Sarwar
Shayar: Meer Nazeer Baqari


kaun qaail tha salaami ke jina aur bhi hai
karbala dekhi to hum samjhe ke haan aur bhi hai
kaun qaail tha…

sadqe us dil ke jo ho hubbe ali se aabad
us se behter koi dunya may makan aur bhi hai
karbala dekhi to…
kaun qaail tha…

naam e shabbir pe be saakhta girya hona
baade kalme ke ye emaan ka nishan aur bhi hai
karbala dekhi to…
kaun qaail tha…

barchiyan maar ke akbar ko pukare aada
sheh se poocho koi farzande jawan aur bhi hai
karbala dekhi to…
kaun qaail tha…

falake peer tujhe sheh ki zaeefi ki qasam
ali akbar sa zamane may jawan aur bhi hai
karbala dekhi to…
kaun qaail tha…

maa ne qasim se kaha subho ko tum hoge shaheed
is liye byah ki jaldi meri jaan aur bhi hai
karbala dekhi to…
kaun qaail tha…

baal khole huve laashe pe jo aayi zehra
khul gaya hurr pe dam-e-nazha ke maa aur bhi hai
karbala dekhi to…
kaun qaail tha…

apne farzando ke marne pe bhi girya na kiya
dehr may zainab e mazloom si maa aur bhi hai
karbala dekhi to…
kaun qaail tha…

sheh se zainab ne kaha tum jo ho mushtaq-e-qaza
meri amma ka koi fateha-khwan aur bhi hai
karbala dekhi to…
kaun qaail tha…

laashe pamaal sar e shaam jo hote hai nazeer
baaghe zahra pe sitam baar e khizan aur bhi hai
karbala dekhi to…
kaun qaail tha…

کون قائل تھا سلامی کے جناں اور بھی ہے
کربلا دیکھی تو ہم سمجھے کے ہاں اور بھی ہے
کون قائل تھا ۔۔۔

صدقے اُس دل کہ جو ہو حُبّ ِعلی سے آباد
اس سے بہتر کوئی دنیا میں مکاں اور بھی ہے
کربلا دیکھ کے ۔۔۔
کون قائل تھا ۔۔۔

نامِ شبیر پہ بے ساختہ گریہ ہونا
بعد کلمے کہ یہ ایماں کا نشاں اور بھی ہے
کربلا دیکھ کے ۔۔۔
کون قائل تھا ۔۔۔

برچھیاں مار کہ اکبر کو پکارے اعدا
شہہ سے پوچھو کوئی فرزند جواںاوربھی ہے
کربلا دیکھ کے ۔۔۔
کون قائل تھا ۔۔۔

فلکِ پیر تجھے شہہ کی ضعیفی کی قسم
علی اکبر سا زمانے میں جواں اور بھی ہے
کربلا دیکھ کے ۔۔۔
کون قائل تھا ۔۔۔

ماں نے قاسم سے کہا صبحُ کو تم ہو گے شہید
اس لیئے بیاہ کی جلدی میری جاں اوربھی ہے
کربلا دیکھ کے ۔۔۔
کون قائل تھا ۔۔۔

بال کھولے ہوئے لاشے پہ جو آئیں زہرا
کھُل گیا حُر پہ دمِ نزا کہ ماں اور بھی ہے
کربلا دیکھ کے ۔۔۔
کون قائل تھا ۔۔۔

اپنے فرزندوں کہ مرنے پہ بھی گریہ نہ کیا
دہر میں زینبِ مظلوم سی ماں اور بھی ہے
کربلا دیکھ کے ۔۔۔
کون قائل تھا ۔۔۔

شہہ سے زینب نے کہا تم جو ہو مشتاقِ قضا
میری اماں کا کوئی فاتحہ خواں اور بھی ہے
کربلا دیکھ کے ۔۔۔
کون قائل تھا ۔۔۔

لاشے پامال سرِ شام جو ہوتے ہیں نظیر
باغِ زہرا پہ ستم بارِ خزاں اور بھی ہے
کربلا دیکھ کے ۔۔۔
کون قائل تھا ۔۔۔