NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Ae sheh ke azadaro

Nohakhan: Nadeem Sarwar
Shayar: Rehaan Azmi


tareeq ke kirdaro kis baat may tum kam ho
ae sheh ke azadaro kis baat may tum kam ho

darya ho samandar ho tum seep ho gowhar ho
tum marde qalandar ho sehra may gulay tar ho
tum azme abuzar ho tum fikr ke qambar ho
tum hur ka qabeela ho tum john ka lashkar ho
ay gham ke alamdaro kis baat may tum kam ho
ae sheh ke azadaro

rasta nahi manzil ho dhadkan nahi tum dil ho
mazloom ke tum haami har zulm ke qaatil ho
insaan ki azmat ke har baat may shaamil ho
zulmat ke samandar may tum noor ka saahil ho
matam ke talabgaro kis baat may tum kam ho
ae sheh ke azadaro....

nisbat hai payambar se nisbat tumhe hyder se
is nisbat-e-maula se tum door rahe shar se
tum aankh milate ho har waqt sitamgar se
jo dars mila tum ko salman se buzar se
tum roop wahi dharo kis baat may tum kam ho
ae sheh ke azadaro....

abbas ke parcham se seekhi hai wafadari
aankhon may tumhare hai imaan ki bedaari
kismat se mili tumko mazloom ki ghamkhwari
zaalim ke liye abh bhi tum taygh ho do dhari
mazloom ke ghamkhwaro kis baat may tum kam ho
ae sheh ke azadaro....

zainab ki rida tumse karti hai sawaal aisa
kis gham may bahaate ho ankhon se lahoo apna
kya ghar may tumhare bhi paigham mera pahuncha
jis deen ke laashe ke kaam aaya mera parda
laaj uski rakho dekho kis baat may tum kam ho
ae sheh ke azadaro....

kya dars liya tumne akbar ki jawani se
kya seekha batao to karbal ki kahani se
mat behlo qateebo ke alfaaz-o-ma'ani se
mehfooz haqeeqat ko rakhna hai kahani se
ay ilm ke mayyaro kis baat may tum kam ho
ae sheh ke azadaro....

masjid ke musalmano maidan ke bano ghazi
tum hur ki tarha maango ek raat may azadi
darbar may zaalim ke kyun bante ho faryadi
sajjad ne jis tarha deeware sitam dha di
deeware sitam dha do kis baat may tum kam ho
ae sheh ke azadaro....

tum nahje balagha ki tafseer may dhal jao
hyder ki ghulami ka andaz to apnao
mazloom ko mat chedo zaalim se na ghabrao
haq baat jo kehna hai sooli pe bhi dohrao
allah ke naqqaro kis baat may tum kam ho
ae sheh ke azadaro....

shabbir ke matam may imaan ki hararat hai
ye ayne ibadat hai ye ayne shariyat hai
shabbir ke paykar may islam ki nusrat hai
khanjar ke talay dekho khayam jo ibadat hai
maula ke tarafdaro kis baat may tum kam ho
ae sheh ke azadaro....

socho to zaro manzar tum shaam e ghariban ka
ghar jalta tha jab ran may us waaris-e-quran ka
pamaal tha jab laasha ek besar-o-samaan ka
kirdaar magar kya tha us waaris-e-quran ka
samjho to samajhdaro kis baat may tum kam ho
ae sheh ke azadaro....

pyasa tha labe darya wo lakhte dil-e-zahra
ankhon se barasta tha ghurbat may lahoo jiska
wo waqt bhi tha kaisa cheh maah ka ek bacha
haaton pe tadapta tha pani ka na khatra
us waqt ke jaanbaro kis baat may tum kam ho
ae sheh ke azadaro....

halmin ki sada abh bhi humse hai yehi kehti
shabbir ki nusrat ki dil may jo tamanna thi
kya abh bhi hai wo baakhi jo chaah thi maula ki
awaaz wohi dil ki ehsaas may hai abh bhi
dehke hue angaaro kis baat may tum kam ho
ae sheh ke azadaro....

tum raahe sadaqat se imaan ki hararat se
kirdare imamat se afkaare risaalat se
tum shaukhe shahadat se maula ki inayat se
islam ki qidmat se mayyare mohabbat se
tareekh nayi likh do kis baat may tum kam ho
ae sheh ke azadaro....

imaan hai azadari hai deen ki bedaari
jarrari-o-karrari hai azme wafadari
himmat na agar haari zinda rahi khuddari
mil jayegi sardari hyder ki tarafdari
kar ke to zara dekho kis baat may tum kam ho
ae sheh ke azadaro....

rehaan pe sarwar pe maula ki inayat hai
nauhe ki azaano may matam ki ekhamat hai
sach poocho ko dono ki har saans ibadat hai
ay ehle aza tum ko matam ki jo daawat hai
moo mod ke mat jaao kis baat may tum kam ho
ae sheh ke azadaro....

تاریخ کے کرداروں کس بات میں تم کم ہو
اے شہہ کے عزاداروں کس بات میں تم کم ہو

دریا ہو سمندر ہو تم سیپ ہو گوہر ہو
تم مردِ قلندر ہو صحرا میں گلِ تر ہو
تم ازمِ ابو ذر ہو تم فکر کے قمبر ہو
تم حر کا قبیلہ ہو تم جون کا لشکر ہو
اے غم کے علمدارو کس بات میں تم کم ہو
اے شہہ کے عزاداروں۔۔۔

رستہ نہیں منزل ہو ڈھڑکن نہیں تم دل ہو
مظلوم کے تم حامی ہر ظلم کے قاتل ہو
انسان کی عظمت کے ہر بات میں شامل ہو
ظلمت کے سمندر میں تُم نور کا ساحل ہو
ماتم کے طلب گاروں کس بات میں تم کم ہو
اے شہہ کے عزاداروں۔۔۔۔

نسبت ہے پیمبر سے نسبت تمہیں حیدر سے
اس نسبتِ مولا سے تم دُور رہے شر سے
تم آنکھ ملاتے ہو ہر وقت ستم گر سے
جو درس ملا تم کو سلمان سے بوزر سے
تم روپ وہی دھارو کس بات میں تم کم ہو
اے شہہ کے عزاداروں۔۔۔

عباس کے پرچم سے سیکھی ہے وفاداری
آنکھو ں میں تمہارے ہے ایمان کی بیداری
قسمت سے ملی تم کومظلوم کی غمخواری
ظالم کے لئے اب بھی تم تیغ ہو دو دھاری
مظلوم کے غمخواروں کس بات میں تم کم ہو
اے شہہ کے عزاداروں۔۔۔

زینب کی ردا تم سے کرتی ہے سوال ایسا
کس غم میں بہاتے ہو آنکھوں سے لہو اپنا
کیا گھر میں تمہارے بھی پیغام میرا پہنچا
جس دین کے لاشے کے کام آیا میرا پردہ
لاج اُسکی رکھوں دیکھو کس بات میں تم کم ہو
اے شہہ کے عزاداروں۔۔۔

کیا درس لیا تم نے اکبر کی جوانی سے
کیا سیکھا بتائو تو کربل کی کہانی سے
مت بہلو خطیبوں کے الفاظ و معانی سے
محفوظ حقیقت کو رکھنا ہے کہانی سے
اے علم کے معیاروں کس بات میں تم کم ہو
اے شہہ کے عزاداروں۔۔۔

مسجد کے مسلمانوں میداں کے بنو ں غازی
تم حُر کی طرح مانگواک رات میں آزادی
دربار میں ظالم کے کیوں بنتے ہو فریادی
سجاد نے جس طرح دیوارِ ستم ڈھادی
دیوارِ ستم ڈھادو کس بات میں تم کم ہو
اے شہہ کے عزاداروں۔۔۔

تم نہجِ بلاغہ کی تفسیر میں ڈھل جائو
حیدر کی غلامی کا انداز تو اپنائو
مظلوم کو مت چھیڑو ظالم سے نہ گھبرائو
حق بات جو کہنا ہے سولی پہ بھی دوہرائو
اللہ کے نقاروں کس بات میں تم کم ہو
اے شہہ کے عزاداروں۔۔۔

شبیر کے ماتم میں ایماں کی حرارت ہے
یہ عینِ عبادت ہے یہ عینِ شریعت ہے
شبیر کے پیکر میں اسلام کی نصرت ہے
خنجر کے تلے دیکھو قائم جو عبادت ہے
مولا کے طرفداروں کس بات میں تم کم ہو
اے شہہ کے عزاداروں۔۔۔

سوچو تو زرا منظر تم شامِ غریباں کا
گھر جلتا تھا جب بن میں اُس وارثِ قرآں کا
پامال تھا جب لاشہ اک بے سر و ساماں کا
کردار مگر کیا تھا اُس وارثِ قرآں کا
سمجھو تو سمجھداروں کس بات میں تم کم ہو
اے شہہ کے عزاداروں۔۔۔

پیا سا تھا لبِ دریا وہ لختِ دلِ زہرا
آنکھوں سے برستاتھا غربت میں لہو جسکا
وہ وقت بھی تھا کیسا چھ ماہ کا اک بچہ
ہاتھوں پہ تڑپتا تھا پانی کانہ تھا قطرہ
اُس وقت کے جاںباروں کس بات میں تم کم ہو
اے شہہ کے عزاداروں۔۔۔

ہل من کی صدا اب بھی ہم سے ہے یہی کہتی
شبیر کی نصرت کی دل میں جو تمنا تھی
کیا اب بھی ہے وہ باقی جو چاہ تھی مولا کی
آواز وہی دل کی احساس میں ہے اب بھی
دھکے ہوئے انگاروں کس بات میں تم کم ہو
اے شہہ کے عزاداروں۔۔۔

تُم راہِ صداقت سے ایماں کی حرارت سے
کردارِ امامت سے افکارِ رسالت سے
تم شوقِ شہادت سے مولا کی عنایت سے
اسلام کی خدمت سے معیارِ محبت سے
تاریخ نئی لکھ دو کس بات میں تم کم ہو
اے شہہ کے عزاداروں۔۔۔

ایماں ہے عزاداری ہے دین کی بیداری
جرّاری وکرّاری ہے عظمِ وفاداری
ہمت نہ اگر ہاری زنداں رہی خدّاری
مل جائے گی سرداری حیدر کی طرف داری
کرکے تو زرا دیکھو کس بات میں تم کم ہو
اے شہہ کے عزاداروں۔۔۔

ریحان پہ سرور پہ مولا کی عنایت ہے
نوحے کی ازانوں میں ماتم کی اقامت ہے
سچ پوچھو تو دونوں کی ہر سانس عبادت ہے
اے اہلِ عزائ تم کوماتم کی جو دعوت ہے
منہ موڑکے مت جائو کس بات میں تم کم ہو
اے شہہ کے عزاداروں۔۔۔