NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Bhaiya mujhe bhool

Nohakhan: Nadeem Sarwar
Shayar: Rehaan Azmi


sab phoolon ke gehne may sawari dulhan aaye
tum jaise ho bas waisi hi pyari dulhan aaye
sar pe agar sehra sajana
haat pe kangna jo bandhana
bhaiya mujhe bhool na jaana

fatema sughra ne ye akbar ko likha hai
bhai salamath raho behna ki dua hai
baad e dua dil may ye armaan basa hai
masnade shaadi jo bichaana
bhaiya mujhe bhool...

baba ki aaghosh may mai bhi to pali hoo
bhaiya teri ungli pakad kar mai chali hoo
kyon mai teri chao se mehroom rahi hoo
baba ki jab chao may jaana
bhaiya mujhe bhool...

baba se kehna ki meri jald khabar le
toot na jaaye kahin baba meri saansein
kat-ta nahi din na guzarti hai ye raatein
khat mera baba ko sunaana
bhaiya mujhe bhool...

bhaiya tere baad jo din eid ka aaya
eid ke din eidi may gham maine hai paaya
mujko bhare ghar ki judaai ne rulaaya
dukh ye mera sab ko bataana
bhaiya mujhe bhool...

sunti hoo karbal ki bahut garm hawa hai
amma se kehna ke ye sughra ne kaha hai
phool sa asghar jo mera saath gaya hai
dhoop se jab usko bachaana
bhaiya mujhe bhool...

behno ka dil jaane jigar hota hai bhai
aankhein teharti hai jidhar hota hai bhai
mere tadapne ka asar hota hai bhai
tum ho jahan mujko bulaana
bhaiya mujhe bhool…

bhaiya mujhe rehta hai har waqt ye ehsaas
bhool gaye kya mujhe mere chacha abbas
aaye alam aaye sakina ho mere paas
aas meri tod na jaana
bhaiya mujhe bhool...

amma se kehna ke sakina ki qasam hai
faasla ab qabr se bemaar ka kam hai
dayr na karna ke mere honton pe dam hai
haath dua ko jo uthaana
bhaiya mujhe bhool...

haye khate sughra ke aakhir may lika tha
acha mere bhai khuda ko tumhein saumpa
sarwar o rehaan ye jumla bhi ajab tha
acha meri qabr pe aana
bhaiya mujhe bhool...

سب پھولوںکے گہنے میںسنواری دلہن آئے
تم جیسے ہوبس ویسی ہی پیاری دلہن آئے
سر پہ اگر سہرا سجانا
ہاتھ پہ کنگنہ جو بندھانا
بھیا مجھے بھول نہ جانا

فاطمہ صغرانے یہ اکبر کو لکھا ہے
بھائی سلامت رہو بہناکی دُعا ہے
بعدِدُعا دل میںیہ ارمان بسا ہے
مسندِشادی جو بچھانا
بھیا مجھے بھول۔۔۔

بابا کی آغوش میںمیں بھی تو پلی ہوں
بھیا تیری اُنگلی پکڑکر میں چلی ہوں
کیوںمیں تیری چھائوںسے محروم رہی ہوں
باباکی جب چھائوں میںجانا
بھیا مجھے بھول۔۔۔

بابا سے کہنا کہ میری جلدخبر لیں
ٹوٹ نہ جائیں کہیںبابا میری سانسیں
کٹتا نہیںدن نہ گزرتی ہیںیہ راتیں
خط میرابابا کو سنانا
بھیا مجھے بھول۔۔۔

بھیا تیرے بعد جو دن عید کا آیا
عید کے دن عیدی میںغم میںنے ہے پایا
مجھ کو بھرے گھر کی جدائی نے رُلایا
دُکھ یہ میرا سب کو بتانا
بھیا مجھے بھول۔۔۔

سُنتی ہوں کربل کی بہت گرم ہوا ہے
اماں سے کہنا کہ یہ صغرا نے کہا ہے
پھول سا اصغرجو میراساتھ گیا ہے
دھوپ سے جب اُس کو بچانا
بھیا مجھے بھول۔۔۔

بہنوں کا دل جانِ جگر ہوتا ہے بھائی
آنکھیںٹہرتیںہیںجدھر ہوتا ہے بھائی
میرے تڑپنے کا اثر ہوتا ہے بھائی
تم ہو جہاں مجھ کو بلانا