NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Qaidi hai bemaar

Nohakhan: Ameer Hasan Aamir
Shayar: Bilal Kazmi


dekh kar bekasi bhatije ki
boli ro ro ke zainab e lachaar
ab na barsao pusht par kode
mar na jaye kahin mera bemaar
qaidi hai bemaar qaidi hai bemaar

har lamha kodon ki aziyat
durron ki uftaad
haye mere bemaar ki ghurbat
kis se kare faryaad
sab raste kanton se bhare hai
chalna hai dushwaar
qaidi hai bemaar...

tauqe garan hai gardan may
aur pairon may zanjeer
sar hai jhukaye sharm ke maare
ibne shahe dilgeer
saath haram hai be-parda
aur shaam ka hai bazaar
qaidi hai bemaar...

sabr kiye ayoob tumhare
paas kahan tasveerein
dhoop hai aise jalne lagi hai
lohe ki zanjeerein
saare badan may pad gaye chaale
haye mera bemaar
qaidi hai bemaar...

qaid e sitam may maut jo aayi
binte shahe muztar ko
khoon bhare kurte may ye keh kar
dafn kiya khwahar ko
tujhko kafan bhi de nahi sakta
bhai hai laachar
qaidi hai bemaar...

thaam ke bedi waqte safar
ro ro ke kaha maula ne
kaise katega shaam ka rasta
ye to khuda hi jaane
aisi hai kuch zauf o naqahat
chalna hai dushwaar
qaidi hai bemaar...

mumkin hai maula ne kaha ho
laashe jari ke paas
dekh sako to dekh lo uth kar
mere chacha abbas
aap ka beta ban ke chala hai
kunbe ka salaar
qaidi hai bemaar...

sharm mujhe khaye jaati hai
kaash abhi mar jaaun
is manzar ko dekh sakun wo
taab kahan se laaun
be parda hai maa behne
aur shaam ka hai darbar
qaidi hai bemaar...

shaam ke jaanib kaise chali thi
paigambar ki aal
kaise padega aamir usko
kaise likhun mai bilal
aage aage naize par tha
farqe shahe abraar
qaidi hai bemaar...

دیکھ کر بے کسی بھتیجے کی
بولی رو کے زینب لاچار
اب نہ برساؤ پشت پر کوڑے
مر نہ جاے کہیں میرا بیمار
قیدی ہے بیمار قیدی ہے بیمار

ہر لمحہ کوڑوں کی اذیت
دروں کی افتاد
ہاے میرے بیمار کی غربت
کس سے کریں فریاد
سب رستے کانٹوں سے بھرے ہیں
چلنا ہے دشوار
قیدی ہے بیمار۔۔۔

طوق گراں ہے گردن میں
اور پیروں میں زنجیر
سر ہے جھکاے شرم کے مارے
ابنِ شہ دلگیر
ساتھ حرم ہیں بے پردہ
اور شام کا ہے بازار
قیدی ہے بیمار۔۔۔

صبر کیےء عیوب تمہارے
پاس کہاں تصویریں
دھوپ ہے ایسی جلنے لگی ہے
لوہے کی زنجیریں
سارے بدن میں پڑ گےء چھالے
ہاے میرا بیمار
قیدی ہے بیمار۔۔۔

قید ستم میں موت جو آی
بنت شہ مضطر کو
خون بھرے کرتے میں یہ کہہ کر
دفن کیا خواہر کو
تجھکو کفن بھی دے نہیں سکتا
بھای ہے لاچار
قیدی ہے بیمار۔۔۔

تھام کے بیڑی وقت سفر
رو رو کے کہا مولا نے
کیسے کٹے گا شام کا رستہ
یہ تو خدا ہی جانے
ایسی ہے کچھ ضعف و نقاہت
چلنا ہے دشوار
قیدی ہے بیمار۔۔۔

ممکن ہے مولا نے کہا ہو
لاش جری کے پاس
دیکھ سکو تو دیکھ لو اٹھ کر
میرے چچا عباس
آپ کا بیٹا بن کے چلا ہے
کنبے کا سالار
قیدی ہے بیمار۔۔۔

شرم مجھے کھاے جاتی ہے
کاش ابھی مر جاؤں
اس منظر کو دیکھ سکوں وہ
تاب کہاں سے لاؤں
بے پردہ ہے ماں بہنیں
اور شام کا ہے دربار
قیدی ہے بیمار۔۔۔

شام کے جانب کیسے چلی تھی
پیغمبر کی آل
کیسے پڑے گا عامر اس کو
کیسے لکھوں میں بلال
آگے آگے نیزے پر تھا
فرق شہ ابرار
قیدی ہے بیمار۔۔۔