NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Maqtale hussain

Nohakhan: Irfan Hussain
Shayar: Nasir Hussain


shabbir ke zakhmon par mehdi
aankhon se khoon bahate hai
tere sookhe galay ko kaata gaya
ye kehke tadapte jaate hai

seene pa jo tere naiza laga
wo pusht ki jaanib se nikla
aur ek shaqi ka teer e sitam
tere maathe phir aake lagaa
un zakhmon par phir aake layeen
has kar pathar barsate hai
shabbir ke zakhmon par...

cheda hai badi bedardi se
asghar ki tarha tera bhi gala
ek teer tere phir dil pa laga
jis se tujhe akbar yaad aaya
tere dil ki ragein ab naizon se
be dard musalman kaat'te hai
shabbir ke zakhmon par...

teri dayen taraf ki phasli par
jab naiza laga tu bayen gira
jab bayen taraf ki phasli par
ek naiza laga tu dayen gira
zahra ki tarha ay maula teri
ab zaalim phasliyan tod'te hai
shabbir ke zakhmon par...

bin e kaahil ka ek zehr bhara
phir teer tere maathe pe laga
ek zaalim ne aage bad kar
ek gurz tere sar par maara
maloon tujhe phir naizon se
bhaalon se zameen par laate hai
shabbir ke zakhmon par...

koi loot'ta hai phir teri aba
koi loot'ta hai ammama tera
koi tera kamarband khaynchta hai
koi khaynchta hai kurta tera
aur garm zameen ki khaak tere
zakhmon may sitamgar daalte hai
shabbir ke zakhmon par...

tere zakhmi galay ko shimr e layeen
phir kaat'ta hai lakdi jaisa
zainab se layeen wo kehta hai
abbas ko ab bulwao zara
dekhe wo ke kaise hum sheh ke
marne par khushiyan manaate hai
shabbir ke zakhmon par...

teeron pe pada tha sehra may
be-gor o kafan sheh ka laasha
nasir na koi tha maula tera
jab laasha tera pamaal hua
yun fatema zahra aur ali
teri ghurbat par ghash khaate hai
shabbir ke zakhmon par...

شبیر کے زخموں پر مہدی
آنکھوں سے خوں بہاتے ہیں
تیرے سوکھے گلے کو کاٹا گیا
یہ کہکے تڑپتے جاتے ہیں

سینے پہ جو تیرے نیزہ لگا
وہ پشت کی جانب سے نکلا
اور ایک شقی کا تیر ستم
تیرے ماتھے پھر آکے لگا
ان زخموں پر پھر آکے لعیں
ہنس کر پتھر برساتے ہیں
شبیر کے زخموں پر۔۔۔

چھیدا ہے بڑی بے دردی سے
اصغر کی طرح تیرا بھی گلا
اک تیر تیرے پھر دل پہ لگا
جس سے تجھے اکبر یاد آیا
تیرے دل کی رگیں اب نیزوں سے
بے درد مسلمان کاٹتے ہیں
شبیر کے زخموں پر۔۔۔

تیری دایں طرف کی پسلی پر
جب نیزہ لگا تو بایںں گرا
جب باییں طرف کی پسلی پر
اک نیزہ لگا تو داییں گرا
زہرا کی طرح اے مولا تیری
اب ظالم پسلیاں توڑتے ہیں
شبیر کے زخموں پر۔۔۔

بن کاہل کا اک زہر بھرا
پھر تیر تیرے ماتھے پہ لگا
اک ظالم نے آگے بڑھ کر
اک گرز تیرے سر پر مارا
ملعون تجھے پھر نیزوں سے
بالوں سے زمیں پر لاتے ہیں
شبیر کے زخموں پر۔۔۔

کوئی لوٹتا ہے پھر تیری عبا
کوئی لوٹتا ہے عمامہ تیرا
کوئی تیرا کمر بند کھینچتا ہے
کوئی کھینچتا ہے کرتہ تیرا
اور گرم زمیں کی خاک تیرے
زخموں میں ستمگر ڈالتے ہیں
شبیر کے زخموں پر۔۔۔

تیرے زخمی گلے کو شمر لعیں
پھر کاٹتا ہے لکڑی جیسا
زینب سے لعیں وہ کہتا ہے
عباس کو اب بلواوء زرا
دیکھیں وہ کہ کیسے ہم شہ کے
مرنے پر خوشیاں مناتے ہیں
شبیر کے زخموں پر۔۔۔

تیروں پہ پڑا تھا صحرا میں
بے گور و کفن شہ کا لاشہ
ناصر نہ کوئی تھا مولا تیرا
جب لاشہ تیرا پامال ہوا
یوں فاطمہ زہرا اور علی
تیری غربت پر غش کھاتے ہیں
شبیر کے زخموں پر۔۔۔