NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Wahan pe rota hai

Nohakhan: Rizwan Zaidi
Shayar: Gohar Jarchvi


wahan pe rota hai khoon ab bhi aasman hussain
jahan pe loota gaya tera karwan hussain

lagi thi seena e akbar pe jis jagah barchi
jahan pe doob gayi khoon may shabihe nabi
jahan pe qatl hua tera naujawan hussain
wahan pe rota hai khoon…

jahan pe pyaas se baysheer tera rota raha
jahan pe nanhe mujahid ke teer maara gaya
jahan pe khat'a hua tha tera bayan hussain
wahan pe rota hai khoon…

jahan huwe thay tere bhai ke qalam baazu
jahan kiya tha alamdaar ne lahoo se wuzoo
jahan huwa tha tera sher neem jaan hussain
wahan pe rota hai khoon…

jahan pe tukdon may bikhra hua tha ek dulha
jahan pe sehra pada kar raha tha wavaila
jahan ujad gaya kubra ka kul jahan hussain
wahan pe rota hai khoon…

jahan pe khatm hua tha hussain tera safar
jahan pe khusk galay par tera chala khanjar
jahan mitaya gaya tha tera nishan hussain
wahan pe rota hai khoon…

jahan pe koi na tha aasra ghareebon ka
jahan pe chin gayi saydaniyo ke sar se rida
jahan tha nauha kuna tera khandan hussain
wahan pe rota hai khoon…

jahan pe gohar e gham tashna lab thay sehme huwe
jahan tamache lagay thay teri sakina ke
tere yateem jahan par thay be-amaan hussain
wahan pe rota hai khoon…

وہاں پہ روتا ہے خوں اب بھی آسمان حسین
جہاں پہ لوٹا گیا تیرا کاروان حسین

لگی تھی سینہِ اکبر پہ جس جگہ برچھی
جہاں پہ ڈوب گئی خون میں شبیہِ نبی
جہاں پہ قتل ہوا تیرا نوجوان حسین
وہاں پہ روتا ہے خوں۔۔۔

جہاں پہ پیاس سے بے شیر تیرا روتا رہا
جہاں پہ ننھے مجاہد کے تیر مارا گیا
جہاں پہ قطع ہوا تھا ترا بیان حسین
وہاں پہ روتا ہے خوں۔۔۔

جہاں ہوئے تھے ترے بھائی کے قلم بازو
جہاں کیا تھا علمدار نے لہو سے وضو
جہاں ہوا تھا ترا شیر نیم جان حسین
وہاں پہ روتا ہے خوں۔۔۔

جہاں پہ ٹکڑوں میں بکھرا ہوا تھا اِک دولہا
جہاں پہ سہرا پڑا کر رہا تھا واویلا
جہاں اُجڑ گیا کبریٰ کا کُل جہان حسین
وہاں پہ روتا ہے خوں۔۔۔

جہاں پہ ختم ہوا تھا حسین تیرا سفر
جہاں پہ خشک گلے پر ترے چلا خنجر
جہاں مٹایا گیا تھا ترا نشان حسین
وہاں پہ روتا ہے خوں۔۔۔

جہاں پہ کوئی نہ تھا آسرا غریبوں کا
جہاں پہ چھن گئی سیدانیوں کے سر سے ردا
جہاں تھا نوحہ کناں تیرا خاندان حسین
وہاں پہ روتا ہے خوں۔۔۔

جہاں پہ گوھرِؔ غم تشنہ لب تھے سہمے ہوئے
جہاں طمانچے لگے تھے تری سکینہ کے
ترے یتیم جہاں پر تھے بے امان حسین
وہاں پہ روتا ہے خوں۔۔۔