NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Royi zanjeer

Nohakhan: Sachey Bhai


sajjad se qadmon se lipat kar royi zanjeer
jab hatayi gayi qadmon se to hat kar royi zanjeer
royi zanjeer...

saath abid ke rahi banke azadare hussain
taare ashke ghame sarwar may simat kar royi zanjeer
royi zanjeer...

sar khule dekh kar balwe may nabi ki itrat
khoon may doob gayi khaak may ath kar royi zanjeer
royi zanjeer...

hashr tha ek bapa larza bar andaam tha kufr
jis ghadi halqa e zanjeer se kat kar royi zanjeer
royi zanjeer...

de ke paigham sheheedon ka lahoo deti hui
ek ek halqa e zanjeer may bat kar royi zanjeer
royi zanjeer...

dekhne waala na tha koi jihad abid ka
kufa o shaam ka darbar ulat kar royi zanjeer
royi zanjeer...

thar tharane laga abbas e jari ka laasha
jaate jaate jo suye nehr palat kar royi zanjeer
royi zanjeer...

jab banane laga bemaar behan ki turbat
thar tharayi kabhi qadmon se lipat kar royi zanjeer
royi zanjeer...

سجاد سے قدموں سے لپٹ کر روی زنجیر
جب ہٹای گیء قدموں سے تو ہٹ کر روی زنجیر
روی زنجیر۔۔۔

ساتھ عابد کے رہی بن کے عزادار حسین
تارے آشک غمِ سرور میں سمٹ کر روی زنجیر
روی زنجیر۔۔۔

سر کھلے دیکھ کر بلوے میں نبی کی عطرت
خون میں ڈوب گیء خاک میں اٹھ کر روی زنجیر
روی زنجیر۔۔۔

حشر تھا اک بپا لرزا بر اندام تھا کفر
جس گھڑی حلقہء زنجیر سے کٹ کر روی زنجیر
روی زنجیر۔۔۔

دے کے پیغام شہیدوں کا لہو دیتی ہوی
ایک اک حلقۂ زنجیر میں بٹ کر روی زنجیر
روی زنجیر۔۔۔

دیکھنے والا نہ تھا کوئی جہاد عابد کا
کوفہ و شام کا دربار الاٹ کر رویی زنجیر
روی زنجیر۔۔۔

تھر ٹھرانے لگا عباس جری کا لاشہ
جاتے جاتے جو سوے نہر پلٹ کر روی زنجیر
روی زنجیر۔۔۔

جب بنانے لگا بیمار بہن کی تربت
تھر تھرای کبھی قدموں سے لپٹ کر روی زنجیر
روی زنجیر۔۔۔