NohayOnline

Providing writeups (english & urdu) of urdu nohay, new & old


Zindan may sakina

Nohakhan: Ali Bahadar
Shayar: Tahir Hussain


rokar ye bayan karti thi zindan may sakina
kab hoke reha qaid se jaungi madina

sab kat gaya maidan may baba ka wo lashkar
abbas chacha hai na qasim hai na akbar

roti thi bain karti thi mazloom sakina
na aun o mohamed hai na bhai mera asghar

abid se bain karti thi rokar ye sakina
ud kar kahan jaate hai sare sham parinde

zainab se sakina ne kaha aah ye bhar ke
rone lagi ye sunte hi bardaasht hui na

ghar jaate hai wapas kaha zainab ne ye rokar
sunte hi ye kehne lagi shabbir ki dukhtar

kab jaungi is qaid se chutkar mai madina
tahir hui khamosh bayan baba se karke

zindan se reha to hui lekin hui mar ke
karbal se wo zindan tak so bhi saki na

روکر یہ بیان کرتی تھی زنداں میں سکینہ
کب ہوکے رہا قید سے جاؤں گی مدینہ

سب کٹ گیا میدان میں بابا کا وہ لشکر
عباس چچا ہے نہ قاسم ہے نہ اکبر

روتی تھی بین کرتی تھی مظلوم سکینہ
نہ عون و محمد ہے نہ بھائی میرا اصغر

عابد سے بین کرتی تھی روکر یہ سکینہ
اڑ کر کہاں جاتے ہیں سارے شام پرندے

زینب سے سکینہ نے کہا آہ یہ بھر کے
رونے لگی یہ سنتے ہی برداشت ہوی نہ

گھر جاتے ہیں واپس کہا زینب نے یہ روکر
سنتے ہی یہ کہنے لگی شبیر کی دختر

کب جاؤں گی اس قید سے چھٹ کر میں مدینہ
طاہر ہوی خاموش بیاں بابا سے کرکے

زنداں سے رہا تو ہوی لیکن ہوی مر کے
کربل سے وہ زندان تک سو بھی سکی نہ