زنداں سے رہا ہو کر بانو اب کیا جائے گی مدینہ
نہ اصغر ہے نہ سکینہ
بی بی کے لئے کتنا مشکل اس حال میں ہوگا جینا
نہ اصغر ہے نہ سکینہ
زنداں سے رہا ہو کر۔۔۔

خالی جھولا شہزادے کا اور خون میں تر اک بالی
جب دیکھے گی گھر میں آکرزنداں سے آنے والی
ٹکڑے ٹکڑے ہو جائے گا بے خنجر اُس کا سینہ
نہ اصغر ہے نہ سکینہ
زنداں سے رہا ہو کر۔۔۔

ایک کی تُربت تاریکی میں اور دھوپ میں ایک کا لاشہ
وہ بھی پیاسی دنیا سے گئی اور مرگیا وہ بھی پیا سا
کس کو بالی پہنائے اب اور کس کو جھلائے جھولا
نہ اصغر ہے نہ سکینہ
زنداں سے رہا ہو کر۔۔۔

جب کھیلتے بچے دیکھے گی کیا گزرے گی بانو پر
یاد آئینگے جب اپنے بچے چل جائے گا دل پہ خنجر
جب ساتھ نہیں دیںگی سانسیں کیسے وہ رہے گی زندہ
نہ اصغر ہے نہ سکینہ
زنداں سے رہا ہو کر۔۔۔

اب اس سے بڑا کیا ہوگا ستم اے چشمِ فلک تُو بتلا
اولاد سے رونق ہوتی ہے اُٹھتا ہے جو کوئی لاشہ
لیکن بانو کی میت پر اب کون ہے رونے والا
نہ اصغر ہے نہ سکینہ
زنداں سے رہا ہو کر۔۔۔

جو بات کہی تھی بچوں سے اُس نے تاعمر نبھائی
نہ پانی پیا ٹھنڈا اُس نے نہ خود سائے میں آئی
بس دھوپ میں بیٹھی شام و سحر کہتی ہی رہی یہ حزینہ
نہ اصغر ہے نہ سکینہ
زنداں سے رہا ہو کر۔۔۔

لوری کی صدا نوحہ بن کر زندان سے گھر تک آئی
ماں سے صغرا یہ پوچھتی ہے یہ کیسی ہے تنہائی
اب ماں نے اگر سچ بول دیا تو مر جائے گی صغرا
نہ اصغر ہے نہ سکینہ
زنداں سے رہا ہو کر۔۔۔

نوحے میں کہاں تک میر حسن ریحان وہ منظر لکھے
آواز تیری نوحے میں ڈھلی آتی ہے صدا ماتم سے
یہ کہکر پُرسہ داروں زہرا کو پُرسہ دینا
نہ اصغر ہے نہ سکینہ
زنداں سے رہا ہو کر۔۔۔


zindan se reha hokar bano ab kya jayega madina
na asghar hai na sakina
bibi ke liye kitna mushkil is haal may hoga jeena
na asghar hai na sakina
zindan se reha hokar....

khaali jhoola shehzade ka aur khoon may tar ek baali
jab dekhegi ghar may aakar zindan se aane wali
tukde tukde ho jayega be khanjar uska seena
na asghar hai na sakina
zindan se reha hokar....

ek ki turbat tareeki may aur dhoop may ek ka laasha
wo bhi pyasi dunya se gayi aur margaya wo bhi pyasa
kisko bali pehnaye ab aur kisko jhulaye jhoola
na asghar hai na sakina
zindan se reha hokar....

jab khelte bache dekhegi kya guzregi bano par
yaad aayenge jab apne bache chal jayega dil par khanjar
jab saath nahi dengi saansein kaise wo rahegi zinda
na asghar hai na sakina
zindan se reha hokar....

ab isse bada kya hoga sitam ay chashme falak tu batla
aulaad se raunak hoti hai uth-ta hai jo koi laasha
lekin bano ki mayyat par ab kaun hai ronay wala
na asghar hai na sakina
zindan se reha hokar....

jo baat kahi thi bachon se usne ta-umr nibhayi
na pani piya thanda usne na khud saaye may aayi
bas dhoop may baithi shaam o sahar kehti hi rahi ye hazeena
na asghar hai na sakina
zindan se reha hokar....

lori ki sada nauha bankar zindan se ghar tak aayi
maa se sughra ye poochti hai ye kaisi hai tanhaai
ab maa ne agar sach bol giya to mar jayegi sughra
na asghar hai na sakina
zindan se reha hokar....

nauhay may kahan tak mir hassan rehan wo manzar likhay
awaaz teri nauhay may dhali aati hai sada matam se
ye kehkar ay pursadaron zehra ko pursa dena
na asghar hai na sakina
zindan se reha hokar....
Noha - Zindan Se Reha Hokar
Shayar: Rehan Azmi
Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online