زیرِ قدم ہے قبر کی منزل آگے حشر کا میداں ہے
زیست کے لہرو سوچ کے بڑھنا ہاتھ یہ کس کا تھاما ہے

کہتے تھے انصارِ شاہِ دیں آج ہے دن قُربانی کا
جس نے لگا دی جان کی بازی ہاتھ اُسی کے میداں ہے
زیرِ قدم ہے ۔۔۔۔۔

صرف گلا بچے کا نہیں ہے تیرا نشانہ اے ظالم
تیر چلانے والے سُن لے تیر کی زد پہ قرآں ہے
زیرِ قدم ہے ۔۔۔۔۔

شش ماہے کی قبر بنا کر آنکھ میں آنسو آ ہی گئے
صبر کی کوئی حد ہوتی ہے انساں آخر انساں ہے
زیرِ قدم ہے ۔۔۔۔۔

کانپ رہا ہے اُس کا کلیجہ تیر ہے جس کی چُٹکی میں
ہونٹوں پر ہے اُس کے تبسم جس کے گلے میں پیکا ہے
زیرِ قدم ہے ۔۔۔۔۔

کہتی تھی بانو اے میرے اصغر توں جو نہیں کیا چین آئے
جھولا خالی گودی اُجڑی گھر سُونا دل ویراں ہے
زیرِ قدم ہے ۔۔۔۔۔

آہ یہ مجبوری کا عالم اُف یہ اسیری یہ غُربت
سر پہ ردا خواہر کے نہیں ہے لاشِ برادر عُریاں ہے
زیرِ قدم ہے ۔۔۔۔۔


zere qadam hai qabr ki manzil aage hashr ka maidan hai
zeest ke lehro soch ke badna haath ye kiska thama hai

kehte thay ansare shahe deen aaj hai din qurbani ka
jisne lagadi jaan ki baazi haath usi ke maidan hai
zere qadam hai....

sirf gala bache ka nahi hai tera nishana ay zaalim
teer chalane wale sunle teer ki zad par quran hai
zere qadam hai....

shish mahe ki qabr banakar aankh may aansoo aa hi gaye
sabr ki koi had hoti hai insan aakhir insan hai
zere qadam hai....

kaamp raha hai uska kaleja teer hai jiski chutki may
honton par hai uske tabassum jiske galay may paika hai
zere qadam hai....

kehti thi bano ay mere asghar tu jo nahi kya chaina hai
jhoola khaali godi ujdi ghar soona dil veeran hai
zere qadam hai....

aah ye majboori ka aalam uff ye aseeri ye ghurbat
sar pe rida khwahar ke nahi hai laashe baradar uriyan hai
zere qadam hai....
Noha - Zere Qadam Hai

Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online