زہر سے ٹکڑے کلیجہ ہو گیا
مجتبیٰ پر ظلم کیسا ہو گیا

پوچھا زینب کے اچھے تھے ابھی
دیکھتے ہی دیکھتے کیا ہو گیا
زہر سے ٹکڑے ۔۔۔۔۔

کچھ وصیت کر رہے تھے مجتبیٰ
ناگاہ تبدیل نقشہ ہو گیا
زہر سے ٹکڑے ۔۔۔۔۔

بولے شبر آہ تم سے کیا کہیں
اے بہن ٹکڑے کلیجہ ہو گیا
زہر سے ٹکڑے ۔۔۔۔۔

ہاتھ اُٹھایا اور خدا حافظ کہا
کچھ نہ تھا پھر حشر برپا ہو گیا
زہر سے ٹکڑے ۔۔۔۔۔

تیر برسے اس قدر تابوت پر
صورتِ ترکش جنازہ ہو گیا
زہر سے ٹکڑے ۔۔۔۔۔

کیسے دو آنسو بہا کر بزم میں
اپنی بخشش کا سہارا ہو گیا
زہر سے ٹکڑے ۔۔۔۔۔


zehr se tukde kaleja hogaya
mujtaba par zulm kaisa hogaya

poocha zainab ne ke ache thay abhi
dekhte hi dekhte kya hogaya
zehr se tukde....

kuch wasiyat kar rahe thay mujtaba
naagaha tabdeel naksha hogaya
zehr se tukde....

bole shabbar aah tum se kya kahein
ay behan tukde kaleja hogaya
zehr se tukde....

haath uthaya aur khudahafiz kaha
kuch na tha phir hashr barpa hogaya
zehr se tukde....

teer barse is khadar taboot par
soorate tarkash janaza hogaya
zehr se tukde....

qais do aansu bahakar bazm may
apni bakshish ka sahara hogaya
zehr se tukde....
Noha - Zehr Se Tukde Kaleja
Shayar: Allama Qais Zangipuri
Nohaqan: Syed Rashid Abbas
Download Mp3
Listen Online