زمینِ کربلا میں دفن ہیں گُل پیرہن کتنے
تڑپ کر مر گئے سینے پہ اس کے خستہ تن کتنے
زمینِ کربلا میں ۔۔۔۔۔

کوئی زینب سے پوچھے تو مصائب کس قدر جھیلے
اُٹھائے کربلا سے شام تک رنج و محن کتنے
زمینِ کربلا میں ۔۔۔۔۔

رضائے شاہِ والا کا ہر اک اک دام زینب کا
زمانے میں ہیں ایسے باوفا بھائی بہن کتنے
زمینِ کربلا میں ۔۔۔۔۔

پسر زینب کے دونوں قاسم و اکبر علی اصغر
دیئے ہیں کربلا کو شاہِ دیں نے گُل بدن کتنے
زمینِ کربلا میں ۔۔۔۔۔

فدا اسلام پر لاکھوں ہوئے تاریخ کہتی ہے
مگر ہیں کربلا والوں کے جیسے بے کفن کتنے
زمین ِ کربلا میں ۔۔۔۔۔

وہ جس میں قاسم و اکبر سے گُل اصغر سے ہوں غُنچے
خزاں لُوٹے ہیں توں نے سچ بتا ایسے چمن کتنے
زمینِ کربلا میں ۔۔۔۔۔


zameene karbala may dafn hai gul payrahan kitne
tadap kar mar gaye seene pe iske khastatan kitne
zameene karbala may....

koi zainab se pooche to masaib kis khadar jhele
uthaye karbala se shaam tak ranjo mehan kitne
zameene karbala may....

razae shahe waala har ek ek daam zainab ka
zamane may hai aisea  bawafa bhai behan kitne
zameene karbala may....

pisar zainab ke dono qasim  o akbar ali asghar
diya hai karbala ko shahe deen ne gulbadan kitne
zameene karbala may....

fida islam par laakhon hue tareekh kehti hai
magar hai karbala walon ke jaise bekafan kitne
zameene karbala may....

wo jisme qasim o akbar se gul asghar se ho ghunchay
khiza loote hai tune sach bata aise chaman kitne
zameene karbala may....
Noha - Zameene Karbala May

Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online