زمین و آسمان دونوں ہے لرزاں ظلم پیکاں سے
بجھے جا رہی ہے پیاس اصغر کی رگ جاں سے

تذبذب میں کھڑی ہے درمیان خیمہ و مقتل
شاہ دین سوچ میں ہیں کہ کیا کہیں بشیر کی مادر

مدار کربلا تم پہ اے اصغر چلے آئو
اجل آواز دیتی ہے مسلسل آج میداں سے

کوئی بچہ ہمک کر باپ پہ ہاتھوں پر مرتا ہے
بگولے اٹھ رہے ہیں ہر طرف خاک و بیاباں سے

اسی کے خون سے چہرہ ہوا ہے سرخ سرور کا
الٹ کر آستین جس کی لے آئے تھے ارماں سے

رہے گی تاقیامت القامہ شرمندہ شرمندہ
لپٹ کر تشنگی روتی رہے گی اس کے داماں سے

رباب خستہ تن کو داغ بچوں کا بھی سہنا ہے
کوئی چھڑائے گا کربلا میں کوئی بچھائے گا زنداں سے

علی اصغر ہے مہ خواب شہید سینہ شہہ پر
بدل کر نینوا کو کربلا جیسے گلستاں سے


zameen-o-aasman dono hai larza zulm-e-paikaa se
bujhay ja rahi hai pyas asghar ki rag-e-jaa se

tazbazab may khade hai darmiyan-e-qaima-o-maqtal
shah-e-deen soch may hai ke kya kahein be-sheer ki maadar

madaar-e-karbala hai tum pa ay asghar chalay aao
ajal awaaz deti hai musalsal aaj maydaa se

koi bacha humak kar baap ke haathon pe marta hai
bagolay uth rahay hai har taraf khaak-e-bayabaa se

usi ke khoon se chahra hua hai surq sarwar ka
ulat kar aasteenain jis ki le aaye thay armaa se

rahaygi taa qayamat alqama sharminda sharminda
lipat kar tashnagi roti rahaygi us ke damaa se

rabab-e-qasta tan ko daag bacho ka bhi sehna hai
koi chutayga karbal mai koi bichdega zindaan se

ali asghar hai mehvay khwaab shahid seena-ey sheh par
badal kar nainava ko karbala jaise gulista se
Noha - Zameen o Aasman
Shayar: Shahid Jafer
Nohaqan: Ali Yazdan