زلزلوں میں دُنیا تھی آسمان لرزا تھا
رِہ گئے گرم صحرا پر شاہِ دیں کا لاشہ تھا

بے قرار موجیں تھیں شعلہ بار دریا تھا
ابنِ ساقئی کوثر تین دن کا پیاسا تھا
زلزلوں میں دُنیا تھی ۔۔۔۔۔

قتل ہو گئے عباس آس ٹُوٹی پیاسوں کی
مشک ٹکڑے ٹکڑے تھی خون میں تر پھریرا تھا
زلزلوں میں دُنیا تھی ۔۔۔۔۔

ہر قدم پہ ٹھوکر تھی دل میں درد اُٹھتا تھا
شہ کی ناتوانی تھی نوجواں کا لاشہ تھا
زلزلوں میں دُنیا تھی ۔۔۔۔۔

کل لہو میں ڈُوبے گی نوجوانی اکبر کی
ماں کی چشمِ حسرت میں صبح کا سناٹا تھا
زلزلوں میں دُنیا تھی ۔۔۔۔۔

تشنہ لب وہ مہماں تھے کربلا کے جنگل میں
جن کے واسطے پانی خون سے بھی مہنگا تھا
زلزلوں میں دُنیا تھی ۔۔۔۔۔

قلب فوج میں اُٹھی انقلاب کی موجیں
دشتِ شاہ پر پیاسا شیر خوار بچہ تھا
زلزلوں میں دُنیا تھی ۔۔۔۔۔


zalzalon may duniya thi aasman larza tha
rayghe garm sehra par shaah-e-deen ka laasha tha

beqarar moujein thi shola baar dariya tha
ibne saaqiye kausar teen din ka pyasa tha
zalzalon may duniya thi....

qatl hogaye abbas aas tooti pyason ki
mashq tukde tukde thi khoon may tar pharera tha
zalzalon may duniya thi....

har khadam pe thokar thi dil may dard uth-ta tha
sheh ki natawani thi naujawan ka laasha tha
zalzalon may duniya thi....

kal lahoo may doobegi naujawani akbar ki
maa ki chashme hasrath thi subha ka sannata tha
zalzalon may duniya thi....

tashnalab wo mehman thay karbala ke jangal may
jinke waaste pani khoon se bhi mehanga tha
zalzalon may duniya thi....

qalb fauj may uthi inqilaab ki moujay
dasht-e-shah par pyasa sheerkhaar bacha tha
zalzalon may duniya thi....
Noha - Zalzalon May Dunya Thi

Nohaqan: Anj. Sabil e Masoomeen
Download Mp3
Listen Online