زینب تڑپ رہی ہے فریاد کر رہی ہے

اٹھارہ سال جس کو نازوں سے میں نے پالا
کڑیل جوان اکبر آنکھوں کا تھا اُجالا
مارا جو ظالموں نے سینے پہ اُس کے بھالا
دیکھا جو زخم میں نے مشکل سے دل سنبھالا
زینب تڑپ رہی ۔۔۔۔۔

ہنگامِ عصر بھّیا جب قتل ہو رہا تھا
اب تک بھی ہے نظر میں منظر جو میں نے دیکھا
مقتل لرز رہا تھا ہر سمت تھا اندھیرا
تڑپی تھی اماں لب پر تھا وا حسینا
زینب تڑپ رہی ۔۔۔۔۔

پھر بعدِ قتلِ سرور اک رات ایسی آئی
چادر نہیں تھی سر پر اور بے کفن تھا بھائی
گھر ظالموں نے لُوٹا اور آگ بھی لگائی
شعلوں کی روشنی میں وہ کربِ بے ردائی
زینب تڑپ رہی ۔۔۔۔۔

تھی کربلا سے کوفہ ہر گام اک مصیبت
اک دور وہ بھی گُزرا بابا کی تھی حکومت
دربار میں ہمارا جانا تھا اک قیامت
سجاد پا برہنہ اور ظوق کی اذیت
زینب تڑپ رہی ۔۔۔۔۔

دربارِ شام میں جب آلِ رسول پہنچی
بازو بندھے ہوئے تھے سر پر ردا نہیں تھی
وہ ظلم ہر قدم پر اور بے کسی ہماری
تڑپا رہی تھی دل کو سجاد کی اسیری
زینب تڑپ رہی ۔۔۔۔۔

سب بیبیاں کھڑی تھیں بالوں سے منہ چھُپائے
طالم نے بید رکھی بھائی کے منہ پہ ہائے
دربار میں کھڑے تھے ہم گردنیں جھُکائے
اس بے کسی میں سب کو عباس یاد آئے
زینب تڑپ رہی ۔۔۔۔۔

زندان کا تھا وہ عالم وحشت برس رہی تھی
بیٹی سے ملنے آئی بھائی کی جب سواری
فریاد کر رہی تھی رو رو کے میری بچی
دم ٹوٹنے کا منظراور آخری وہ ہچکی
زینب تڑپ رہی ۔۔۔۔۔


zainab tadap rahi hai faryad kar rahi hai

athara saal jisko nazon se maine paala
kariyal jawan akbar aankhon ka tha ujala
maara jo zalimo ne seene pa uske bhala
dekha jo zakhm maine mushkil se dil sambhala
zainab tadap rahi....

hungame asr bhaiya jab qatl ho raha tha
ab tak bhi hai nazar may manzar jo maine dekha
maqtal laraz raha tha har simt tha andhera
tadpi thi amma lab par tha wa-hussaina
zainab tadap rahi....

phir baade watl-e-sarwar ek raat aisi aayi
chadar nahi thi sar par aur bekafan tha bhai
ghar zalimo ne loota aur aag bhi lagayi
sholon ki roshni may wo karbe beridayi
zainab tadap rahi....

thi karbala se koofa har gaam ek musibat
ek daur wo bhi guzra baba ki thi hukumat
darbar may hamara jaana tha ek qayamat
sajjad pa barehna aur tauq ki aziyyat
zainab tadap rahi....

darbare sham may jab aale rasool pahunchi
bazu bandhe hue thay sar par rida nahi thi
wo zulm har qadam par aur bekasi hamari
tadpa rahi thi dil ko sajjad ki aseeri
zainab tadap rahi....

sab bibiyan khadi thi balon se moo chipaye
zalim ne bayd rakhi  bhai ke lab pe haye
darbar may khade thay hum gardane jhukaye
is bekasi may sab ko abbas yaad aaye
zainab tadap rahi....

zindan ka tha wo aalam wehshat baras rahi thi
beti se milne aayi bhai ki jab sawari
faryad kar rahi thi ro ro ke meri bachi
dam tootne ka manzar aur aakhri wo hichki
zainab tadap rahi....
Noha - Zainab Tadap Rahi Hai

Nohaqan: Askar Ali Khan
Download Mp3
Listen Online