زینب پُکاری لاش پر رو کر جواب دو
مظلوم فاطمہ، میری مادر جواب دو

کھانا ابھی کھِلاتی تھی ہم کو مانا مانا
اب چُپ ہو کیوں رسول کی دُختر جواب دو
زینب پُکاری لاش پر ۔۔۔۔۔

میرا ذرا بھی رونا گوارا نہ تھا کبھی
چلا رہی ہوں کب سے برابر جواب دو
زینب پُکاری لاش پر ۔۔۔۔۔

سب سے سوا حسین کو کرتی تھی پیار آپ
آتے ہیں سر برہنہ برادر جواب دو
زینب پُکاری لاش پر ۔۔۔۔۔

کیا دیکھتے ہی دیکھتے اماں گُزر گئیں
کیوں جلد یوں اُجاڑ دیا گھر جواب دو
زینب پُکاری لاش پر ۔۔۔۔۔

اٹھارہ سال عمر میں کیا ظلم سہہ گئیں
کیسا آج دستِ مطہر جواب دو
زینب پُکاری لاش پر ۔۔۔۔۔

بیٹی نہ مانو مجھ کو سمجھ لو کنیز ہی
قدموں پہ آنکھیں ملتی ہے مضطر جواب دو
زینب پُکاری لاش پر ۔۔۔۔۔

سر پیٹتی ہو خاک اُڑاتی ہوں دیکھیئے
لِلّہ بحرِ حمد و حیدر جواب دو
زینب پُکاری لاش پر ۔۔۔۔۔

پھیلائے ہاتھ لاشئہ زہرا نے اے نگین
حسنین آئے کہتے جو مادر جواب دو
زینب پُکاری لاش پر ۔۔۔۔۔


zainab pukari laash par rokar jawaab do
mazloom fathima, meri madar jawab do

khaana abhi khilati thi humko mana mana
ab chup ho kyon rasool ki dukhtar jawab do
zainab pukari laash par....

mera zara bhi rona gawara na tha kabhi
chillarahi hoo kabse barabar jawab do
zainab pukari laash par....

sabse siva hussain ko karti thi pyar aap
aate hai sarba-rehna baraadar jawab do
zainab pukari laash par....

kya dekhte hi dekhte amma guzar gayi
kyon jald yun ujaad diya ghar jawab do
zainab pukari laash par....

athara saal umr may kya zulm seh gayi
kaisa aaj daste mutahhar jawab do
zainab pukari laash par....

beti na maano mujko samajlo kaneez hi
khadmo pe aankhein malti hai mustar jawab do
zainab pukari laash par....

sar peet-ti hoo khaakh udaati hoo dekhiye
lil-laah behre ahmado hyder jawab do
zainab pukari laash par....

phailaye haat laashaye zehra ne ay nageen
hasnain aaye kehte jo madar jawab do
zainab pukari laash par....
Noha - Zainab Pukari Laash

Shayar: Nageen