زینب نے کہا لٹ گئی پردیس میں آکر
اے ثانی کوثر
گھر جل گیا اور چھن گئی سر سے میرے چادر

دل تھامے ہوئے میں در خیمہ پہ کھڑی تھی
اور دیکھ رہی تھی
تھا حلق پہ سرور کے رواں شمر کا خنجر
اے ثانی کوثر

غازی کا علم خون میں ڈوبا ہوا آیا
فریاد خدایا
دریا پہ کٹے بازوئے عباس دلاور
اے ثانی کوثر

اٹھارہ برس پالا بڑے چاہوں سے جس کو
میں کھو چکی اس کو
ارماں میرے رہ گئے سب خاک میں مل کر
اے ثانی کوثر

ظلم بھی ڈھایا گیا مجھ سوگ نشین پر
مجبور و حزین پر
اک تیر سے چھیدا گیا حلق علی اصغر
اے ثانی کوثر

اعدا نے سکینہ پہ زکی ایسی جفا کی
بچی نے قضائ کی
بے غسل و کفن دفن ہوئی وہ دختر سرور
اے ثانی کوثر


zainab ne kaha lut gayi pardes may aakar
ay saqiye kausar
ghar jal gaya aur chin gayi sar se mere chadar

dil thame hue mai dare qaima pa khadi thi
aur dekh rahi thi
tha halq pa sarwar ke rawan shimr ka qanjar
ay saqiye kausar

ghazi ka alam khoon may dooba hua aaya
faryaad khudaya
darya pa kate baazu e abbas e dilawar
ay saqiye kausar

athara baras paala bade chahon se jisko
mai kho chuki usko
armaan mere rehgaye sab khaak may milkar
ay saqiye kausar

zulm bhi dhaaya gaya mujh sogh nasheen par
majbooro hazeeen par
ek teer se cheda gaya halqe ali asghar
ay saqiye kausar

aada ne sakina pa zaki aisi jafa ki
bachi ne qaza ki
beghuslo kafan dafn hui wo dukhtare sarwar
ay saqiye kausar
Noha - Zainab Ne Kaha Lutgayi
Shayar: Zaki
Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online