زینب نے جس کو پالا نوری حجاب میں
وہ قتل ہو گیا ہے عہدِ شباب میں
ہائے اکبر ہائے اکبر

اکبر کی لاش دیکھی تو شبیر نے کہا
صغرا کو کیا لکھوں گا خط کے جواب میں
ہائے اکبر ہائے اکبر۔۔۔۔۔۔

خیمے سے نکلے اکبر تو سب کو گماں ہوا
سرور ہوںجیسے بیٹھے زینِ عُقاب میں
ہائے اکبر ہائے اکبر۔۔۔۔۔۔

اُس کو بھی ظالموںنے نیزے پہ چڑھایا
جی بھر کے جونہ کھیلا گودِرُباب میں
ہائے اکبر ہائے اکبر۔۔۔۔۔۔

ماتم کا مثلا ہی یہ ہم سے نہ پُوچھیئے
سب کچھ لکھا ہوا ہے اُم الکتاب میں
ہائے اکبر ہائے اکبر۔۔۔۔۔۔

ٹپکا لہو جو بن میں شبیر کا امیر
اُبھرا وہ آج بن کر شکلِ گلاب میں
ہائے اکبر ہائے اکبر۔۔۔۔۔۔


zainab ne jisko paala noori hijaab may
wo qatl hogaya hai ehde shabaab may
haaye akbar haaye akbar

akbar ki laash dekhi to shabbir ne kaha
sughra ko kya likhunga khat ke jawaab may
haaye akbar......

qaime se nikle akbar to sabko gumaan hua
sarwar ho jaise baithe zeene rikhaab may
haaye akbar......

usko bhi zaalimon ne naize pe chadaaya
jee bhar ke jo na khela gode rubaab may
haaye akbar......

matam ka mas-ala hai ye hamse na poochiye
sab khuch likha hua hai ummul kitaab may
haaye akbar......

tapka lahoo jo ban may shabbir ka ameer
ubhra wo aaj bankar shakle gulaab may
haaye akbar......
Noha - Zainab Ne Jisko Paala
Shayar: Ameer
Nohaqan: Hasan Sadiq
Download Mp3
Listen Online