زینب نے ہلا کر شانہ کہا
اے سید سجاد اٹھو
لڑی ہے زمین کرب و بلا
زینب نے ہلا کر

گردوں نے لہو برسایا ہے
سورج بھی گرہن میں آیا ہے
سر تن سے ہوا سرور کا جدا
زینب نے ہلا کر

سر کاٹ کے نوک نیزہ پر
اعدائ رکھا ہے اے دلبر
پامال کی زد پر ہے لاشہ
زینب نے ہلا کر

فرزند نبی پر گھوڑوں کی
میں کیا کروں وہ یلغار ہوئی
سب ٹکڑے بدن سرور کا ہوا
زینب نے ہلا کر

معصوم سکینہ کے بندے
اف شمر نے اس طرح کھینچے
خون کانوں سے اب تک ہے بہتا
زینب نے ہلا کر

ہے وقت کٹھن آنکھیں کھولو
صدقے ہو پھوپھی منہ سے بولو
بیدار ہو غش سے بہرے خدا
زینب نے ہلا کر

عقبہ میں تو بے شک پائے گا
دنیا میں بھی کچھ مل جائے صلہ
کہہ دے جو انیس اتنا زہرا
زینب نے ہلا کر


zainab ne hilakar shana kaha
ay saiyade sajjad utho
larza hai zameen e karbobala
zainab ne....

gardoone lahoo barsaya hai
sooraj bhi grehan may aaya hai
sar tan se hua sarwar ka juda
zainab ne....

sar kaat ke noke naiza par
aada ne rakha hai ay dilbar
paamal ki zadd par hai laasha
zainab ne....

farzande nabi par ghodon ki
mai kya karoon wo yalghaar hui
sab tukde badan sarwar ka hua
zainab ne....

masoom sakina ke bunde
uff shirm ne iss tarha kheenche
khoon kanon se ab tak hai behta
zainab ne....

hai waqt kathan aankhein kholo
sadqe ho phupi moo se bolo
bedaar ho ghash se behre khuda
zainab ne....

ukhba may tho beshak paaega
dunya may bhi kuch miljaae sila
kehde jo anees itna zehra
zainab ne....
Noha - Zainab Ne Hilakar Shana
Shayar: Anees Pehersari
Nohaqan: Ali Zia Rizvi
Download Mp3
Listen Online