زینب کے ساتھ فضہ ہائے شام جا رہی ہے
ہر گام پر ضعیفہ صدمے اُٹھا رہی ہے

ہو شام ہو یا کوفہ غازی کے بعد فضہ
زہرا کی بیٹیوں کا پردہ بنا رہی ہے
زینب کے ساتھ۔۔۔

اس دن کے واسطے ہی مانگی تھی زندگانی
یوں کہہ کے تعزیانے مظلوم کھا رہی ہے
زینب کے ساتھ۔۔۔

چھوڑا نہ ظلم سہہ کر زینب کا ساتھ اس نے
زہرا سے جو کیا تھا وعدہ نبھا رہی ہے
زینب کے ساتھ۔۔۔

بازار شام کا ہے زینب کا سر کھُلا ہے
سر کو جھُکائے فضہ آنسو بہا رہی ہے
زینب کے ساتھ۔۔۔

کندھے پہ کل اسی کے زہرا کا تھا جنازہ
سنگ آج قید ہو کے زینب کے جا رہی ہے
زینب کے ساتھ۔۔۔

جواد اشک خون کے سجاد کیوں نہ روئے
ملکِ وفا کی ملکہ دُنیا سے جا رہی ہے
زینب کے ساتھ۔۔۔


zainab ke saath fizza haaye shaam ja rahi hai
har gaam par zaeefa sadme utha rahi hai

ho shaam ho ya kufa ghazi ke baad fiza
zehra ki betiyon ka parda bana rahi hai
zainab ke saath....

is din ke waaste hi maangi thi zindaigani
yun kehke tazianay mazloom kha rahi hai
zainab ke saath....

choda na zulm seh kar zainab ka saath is ne
zehra se jo kiya tha wada nibha rahi hai
zainab ke saath....

bazaar shaam ka hai zainab ka sar khula hai
sar ko jhukai fizza aansu baha rahi hai
zainab ke saath....

kaandhe pe kal isi ke zahra ka tha janaza
sang aaj qaid hoke zainab ke jaa rahi hai
zainab ke saath....

jawaad ashk khoon ke sajjad kyun na roye
mulkay wafa ki malika dunya se jaa rahi hai
zainab ke saath....
Noha - Zainab Ke Saath Fizza
Shayar: Jawaad
Nohaqan: Hasan Sadiq
Download Mp3
Listen Online