زینب کا یہ نوحہ تھا تم لوٹ کے آ جائو
عباس میرے بھیا تم لوٹ کے آ جائو

اب شامِ غریباں کے آثار نمایاں ہیں
اس دشتِ مُصیبت میں گھر لوٹنے کے ساماں ہیں
اک تم کو خبر دی ہے ہم جتنے پریشاں ہیں
عباس میرے بھیا تم لوٹ کے آ جائو
زینب کا یہ نوحہ ۔۔۔۔۔

جب شام ہوئی بن میں یہ بین تھے زینب کے
خیموں کو جلانے کے ہوتے ہیں یہاں چرچے
تم شمر سے یہ کہہ دوچادر نہ میری چھینے
عباس میرے بھیا تم لوٹ کے آ جائو
زینب کا یہ نوحہ ۔۔۔۔۔

لو فوجِ یزیدی نے خیموں کو جلا ڈالا
لو جلنے لگا کُرتا معصوم سکینہ کا
فریاد غریبوں کی کوئی بھی نہیں سُنتا
عباس میرے بھیا تم لوٹ کے آ جائو
زینب کا یہ نوحہ ۔۔۔۔۔

اب چھین لی اعدا نے اے بھائی میری چادر
اس عالمِ غربت میں ہے خاک میرے سر پر
تم میرے محافظ ہو بتلا دو انہیں آ کر
عباس میرے بھیا تم لوٹ کے آ جائو
زینب کا یہ نوحہ ۔۔۔۔۔

میں اکیلی ہوں تم آ کے ذرا دیکھو
کس طرح سنبھا لوں گی سہمے ہوئے بچوں کو
اے بھائی میرے آ کر زینب کو سہارا دو
عباس میرے بھیا تم لوٹ کے آ جائو
زینب کا یہ نوحہ ۔۔۔۔۔

عباس نہیں آئے دُکھ سہتی رہی زینب
عباس نہیں آئے روتی ہی رہی زینب
عباس نہیں آئے یہ کہتی رہی زینب
عباس میرے بھیا تم لوٹ کے آ جائو
زینب کا یہ نوحہ ۔۔۔۔۔

سرور کے محبوں میں محشر ہے بپا اشرف
سر پیٹتے ہیںرو کر سب اہلِ اعزا اشرف
کانوں میں جو آتی ہے زینب کی صدا اشرف
عباس میرے بھیا تم لوٹ کے آ جائو
زینب کا یہ نوحہ ۔۔۔۔۔


zainab ka ye noha tha tum laut ke aajao
abbas mere bhaiya tum laut ke aajao

ab shame ghariban ke aasaar numayan hai
is dashte musibat may ghar lutne ke samaan hai
ek tumko khabar di hai hum jitne pareshan hai
abbas mere bhaiya tum laut ke aajao
zainab ka ye noha....

jab sham hui ban may ye bain thay zainab ke
qaimo ko jalane ke hote hai yahan charchay
tum shimr se ye kehdo chadar na meri cheene
abbas mere bhaiya tum laut ke aajao
zainab ka ye noha....

lo fauje yazeedi ne qaimo ko jala daala
lo jalne laga kurta masoom sakina ka
faryaad ghaeerbon ki koi bhi nahi sunta
abbas mere bhaiya tum laut ke aajao
zainab ka ye noha....

ab cheenli aada ne ay bhai meri chadar
is aalame ghurbat may hai khaak mere sar par
tum mere mohafiz ho batlado inhe aakar
abbas mere bhaiya tum laut ke aajao
zainab ka ye noha....

mai kitni akeli hoo tum aake zara dekho
kis tarha sambhalungi sehmay hue bachin ko
ay bhai mere aakar zainab ko sahara do
abbas mere bhaiya tum laut ke aajao
zainab ka ye noha....

abbas nahi aaye dukh sehti rahi zainab
abbas nahi aaye roti hi rahi zainab
abbas nahi aaye ye kehti rahi zainab
abbas mere bhaiya tum laut ke aajao
zainab ka ye noha....

sarwar ke mohibbo may mehshar hai bapa ashraf
sar peet-te hai rokar sab ahle aza ashraf
kano may jo aati hai zainab ki sada ashraf
abbas mere bhaiya tum laut ke aajao
zainab ka ye noha....
Noha - Zainab ka Ye Noha
Shayar: Ashraf
Nohaqan: Tableeq e Imamia (Nazim Hussain)
Download Mp3
Listen Online