زینب کا تھا یہ نوحہ بھائی ہے بھوکا پیاسا
اے شمر تُو ٹھہر جا بھائی ہے بھوکا پیاسا

سوکھے گلے پہ خنجر مت پھیر اے ستمگر
پانی پلا دے تھوڑا بھائی ہے بھوکا پیاسا
زینب ۔۔۔۔۔

سینے سے تُو اُتر جا زخموں میں درد ہو گا
مظلوم پر ترس کھابھائی ہے بھوکا پیاسا
زینب ۔۔۔۔۔

کھویا ہے نوجواں کو گاڑھا ہے بے زباں کو
کوئی نہیں ہے اُس کابھائی ہے بھوکا پیاسا
بھائی ہے بھوکا پیاسا
زینب ۔۔۔۔۔

چادر کو چھین لے تُو خیموں کو لُوٹ لے تُو
اُس کی نہیں ہے پروابھائی ہے بھوکا پیاسا
زینب ۔۔۔۔۔

ارض و سما کے والی دینا ہے تُو گواہی
پہلو میں بیٹھے دریابھائی ہے بھوکا پیاسا
زینب ۔۔۔۔۔

یا فاطمہ اب آئو یا مرتضیٰ اب آئو
دم توڑتا ہے بیٹابھائی ہے بھوکا پیاسا
زینب ۔۔۔۔۔


zainab ka tha ye nauha bhaai hai bhuka pyasa
ay shimr tu teher ja bhaai hai bhuka pyasa

sukhe gale pe khanjar mat phair ay sitamgar
paani pilade thoda bhaai hai bhuka pyasa
zainab.......

seene se tu utarja zaqmo may dard hoga
mazloom par taraz kha bhaai hai bhuka pyasa
zainab....

khoya hai noujawan ko gaada hai bezaban ko
koi nahi hai uska bhaai hai bhuka pyasa
bhai hai bhuka pyasa
zainab....

chaadar ko cheenle tu qaimon ko loot le tu
us ki nahi hai parwa bhaai hai bhuka pyasa
zainab.............

arzo sama ke waali dena hai tu gawahi
pehlu may behte darya bhaai hai bhuka pyasa
zainab........

ya fatima ab aao ya murtaza ab aao
dam todta hai beta bhaai hai bhuka pyasa
zainab............
Noha - Zainab Ka Tha Ye Noha

Nohaqan: Mirza Sikander Ali
Download Mp3
Listen Online