زینبِ مضطر ہے اور منظر بہ منظر کربلا
خون رُلواتی رہے گی زندگی بھر کربلا

موت کی آغوش میں بیٹے نے وہ انگڑائی لی
ساتھ جس انگڑائی کے سرور کی بینائی گئی
خوں میں تر اکبر ہے کہ خون میں تر کربلا
زینبِ مضطر ہے۔۔۔

بہہ گیا پانی تو پھر ساری اُمیدیں بہہ گئیں
حسرتیںسب شیر کی مٹی میں مل کر رہ گئیں
ورنہ غازی کو تھی کوزے کے برابر کربلا
زینبِ مضطر ہے۔۔۔

نبضِ دوراں رُک گئی ہے آسماں سکتے میں ہے
اور اُدھر خیمے کے در پر ایک ماں سکتے میں ہے
بے زباں کے ساتھ ہے پیکاں کی زد پر کربلا
زینبِ مضطر ہے۔۔۔

شاہِ دیں تیروں پہ ٹہرا ہے تیرا جسمِ فگار
زرِ خنجر بھی مگر تُو مہوے ذکرِ کردگار
آگئی ہے تیرے سجدے میں سمٹ کر کر بلا
زینبِ مضطر ہے۔۔۔

ہائے وہ اک ناتواں اور آہنی طوق ِگراں
اور وہ بیمار کے تلوئوں میں کانٹے الاماں
رورہی ہے پائے عابد سے لپٹ کر کربلا
زینبِ مضطر ہے۔۔۔

ہر نفس ہے یہ دُعا اپنی عزاداری رہے
اور قائم سارے غمخواروں کی غمخواری رہے
حشر تک شاہد ہو یوں ہی اشک پرور کربلا
زینبِ مضطر ہے۔۔۔


zainab-e-muztar hai aur manzar ba manzar karbala
khoon rulwati rahegi zindagi bhar karbala

maut ki aaghosh may bete ne vo angdayi li
saath jis angdayi ke sarwar ki binaayi gayi
khoon may tar akbar hai ke khoon may tar karbala
zainab-e-muztar hai....

beh gaya pani to phir saari umeedein behgayi
hasratay sab shair ki mitti may mal kar rehgayi
varna ghazi ko thi kuzay ke barabar karbala
zainab-e-muztar hai....

nabz e daura ruk gayi hai aasman saktay may hai
aur udhar qaimay ke dar par ek maa saktay may hai
bezabaan ke saath hai payka ki zad par karabala
zainab-e-muztar hai....

shah-e-deen teero pa thehra hai tera jism-e-figar
zere khanjar bhi magar tu mehve zikr-e-kirdigar
aagayi hai tere sajday may simat kar karbala
zainab-e-muztar hai....

haaye wo ek natava aur aahani tauq e gira
aur wo bemaar ke talvo may kantay alama
ro rahi hai paey abid se lipat kar karbala
zainab-e-muztar hai....

har nafas hai ye dua apni azadari rahey
aur qayam sarey ghamkhwaro ki ghamkhwari rahey
hashr tak shahid ho yun hi ashk parvar karbala
zainab-e-muztar hai....
Noha - Zainab e Muztar Hai
Shayar: Shahid Jafer
Nohaqan: Anj. Al Zulfiqar