زینبِ حزینِ من، خواہرا خدا حافظ
من کے بی علمدارم، بے معین و بے یارم
از حیاتِ بے زارم ، خواہرا خدا حافظ
زینبِ حزین من، خواہرا خدا حافظ

اے میری بہن زینب گھر تیرے حوالے ہے
جو لائقِ سجدہ ہے سر اُس کے حوالے ہے
بس چلنے کو ہے خنجر ، خواہرا خدا حافظ
زینبِ حزینِ من۔۔۔۔۔

مارے گئے سب بہنا ، ہم رہ گئے اب تنہا
اس عالمِ غربت میں ، مشکل ہے میرا جینا
میرے گئے سب دلبر ، خواہرا خدا حافظ
زینبِ حزینِ من۔۔۔۔۔

خنجر میری گردن پر جب شمر چلائے گا
رہ رہ کے مجھے تیرا چہرا نظر آئے گا
تُو ہو گی برہنہ سر ، خواہرا خدا حافظ
زینبِ حزینِ من۔۔۔۔۔

زندان کے اندھیرے میں جب روئے میری بچی
دل جوئی بہت کرنا اُس وقت بہن اُس کی
مر جائے نہ وہ گھُٹ کر ،خواہرا خدا حافظ
زینبِ حزینِ من۔۔۔۔۔

زندان سے رہا ہو کر جب سوئے وطن جانا
جو ظلم ہوئے ہم پر صغریٰ کو وہ بتلانا
ہم قتل ہوئے کیونکر ،خواہرا خدا حافظ
زینبِ حزینِ من۔۔۔۔۔

کہنا تیری فُرقت میں اکبر بھی تڑپتا تھا
سوتا تھا سرِ مقتل جب خط تیرا آیا تھا
سینے پہ سِناں کھا کر ، خواہرا خدا حافظ
زینبِ حزینِ من۔۔۔۔۔

ہر گود میں ڈھونڈے گی صغریٰ علی اصغر کو
تم خود ہی بتا دینا بیمار کو مضطر کو
ناوق لگا گردن پر ، خواہرا خدا حافظ
زینبِ حزینِ من۔۔۔۔۔

پوچھے جو سکینہ کو بیمار میری دُختر
بتلانا کے زندان میں وہ مر گئی رو رو کر
وہ زخم بھی ہے دل پر،خواہرا خدا حافظ
زینبِ حزینِ من۔۔۔۔۔

ریحان بہت روئی زینب یہ بین سُن کر
کہنے لگی بھائی کے سینے پہ وہ سر رکھ کر
دل ڈوبا ہے یہ سُن کر ، خواہرا خدا حافظ
مارے گئے سب بہنا ، ہم رہ گئے اب تنہا
اس عالمِ غربت میں ، مشکل ہے میرا جینا
مارے گئے سب دلبر،خواہرا خدا حافظ
زینبِ حزینِ من۔۔۔۔۔


zainab-e-hazeenay man, khwahara khuda hafiz
man kay bi alamdaram, bay mueeno bay yaram
az hayaate bay zaaram, khwahara khuda hafiz
zainab-e-hazeenay man, khwahara khuda hafiz

ay meri bahan zainab ghar tere hawalay hai
jo laaeq-e-sajda hai sar uske hawalay hai
bas chalnay ko hai khanjar, khwahara khuda hafiz
zainab-e-hazeenay man....

maaray gaye saab behna, hum reh gaye ab tanha
is aalam-e-ghurbat may, mushkil hai mera jeena
maaray gaye sab dilbar, khwahara khuda hafiz
zainab-e-hazeenay man....

khanjar meri gardan par jab shimr chalayega
reh reh kay mujhe tera chehra nazar aayega
tu hogi barhaina sar, khwahara khuda hafiz
zainab-e-hazeenay man....

zindaan kay andheray may jab roye meri bachchi
dil joyi bahot karna us waqt behan uski
mar jaye na wo ghut kar, khwahara khuda hafiz
zainab-e-hazeenay man....

zindaan say riha hokar jab suye watan jaana
jo zulm huway hum par sughra ko wo batlaana
hum qatl huway kyun kar, khwahara khuda hafiz
zainab-e-hazeenay man....

kehna teri furqat may akbar bhi tadap ta tha
sota tha sar-e-maqtal jab khat tera aaya tha
seenay pe sina kha kar, khwahara khuda hafiz
zainab-e-hazeenay man....

har godh may dhoondegi sughra ali asghar ko
tum khud hi bata dena beemar ko muztar ko
nawaq laga gardan par, khwhara khuda hafiz
zainab-e-hazeenay man....

poochay jo sakina ko beemar meri dukhtar
batlana kay zindaan may wo margayi ro ro kar
wo zakhm bhi hai dil par, khwahara khuda hafiz
zainab-e-hazeenay man....

rehaan bahot royi zainab ye bayaan sun kar
kehnay lagi bhai kay sine pe wo sar rakh kar
dil dooba hai ye sun kar, khwahara khuda hafiz
maaray gaye saab behna, hum reh gaye ab tanha
is aalam-e-ghurbat may, mushkil hai mera jeena
maaray gaye sab dilbar, khwahara khuda hafiz
zainab-e-hazeenay man....
Noha - Zainab e Hazeenay Man
Shayar: Rehaan Azmi
Nohaqan: Nadeem Sarwar
Download Mp3
Listen Online