زینب اسیر ہے میرے غازی دُہائی ہے
سر پہ مصیبتوں کی گھٹا میرے چھائی ہے

جلتی زمین ہے پائوں میں نعلین بھی نہیں
اور خار دار راہیں ہیں تیری دُہائی ہے
زینب ۔۔۔۔۔

جا کر وطن کہوں گی میں نانا کی قبر پر
بھائی کو کھو کے زینبِ دلگیر آئی ہے
زینب ۔۔۔۔۔

ہر ظلم پہ سکینہ تجھے دیتی ہے صدا
شدت سے آج اُس کو تیری یاد آئی ہے
زینب ۔۔۔۔۔

مہمان بُلا کے کرنے لگے سنگ باریاں
کُوفے میں ہم پہ کیسی مصیبت یہ آئی ہے
زینب ۔۔۔۔۔

بھیا تیری بہن پہ مصائب بہت ہوئے
ظلم و ستم کی ماری ہے غم کی ستائی ہے
زینب ۔۔۔۔۔

بھیا تمہارے بعد جلائے گئے خیام
بہنا یہ جلتے خیمے سے عابد کو لائی ہے
زینب ۔۔۔۔۔

ذکرِ حسین احمد و محسن کا کام ہے
دونوں کی عمر بھر کی یہی بس کمائی ہے
زینب ۔۔۔۔۔


zainab aseer hai mere ghazi duhayi hai
sar pe musibaton ki ghata mere chaayi hai

jalti zameen hai paaon may naalayn bhi nahi
aur qaardaar raahein hai teri duhayi hai
zainab........

jaakar watan kahungi mai nana ki khabr par
bhai ko khoke zainabe dilgeer aayi hai
zainab........

har zulm pe sakina tujhe deti hai sada
shiddat se aaj usko teri yaad aayi hai
zainab........

mehmaan bulaake karne lage sang bariyan
koofe may humpe kaisi musibat ye aayi hai
zainab........

bhaiya teri behan pe masayab bahut huye
zulm-o- sitam ki maari hai gham ki satayi hai
zainab........

bhaiya tumhare baad jalaaye gaye khayam
behna ye jalte khaime se abid ko laayi hai
zainab........

zikre hussain ahmed-o-mohsin ka kaam hai
duno ke umr bhar ki yehi bas kamayi hai
zainab........
Noha - Zainab Aseer Hai
Shayar: Zulfiqar Ahmed
Nohaqan: Mir Mohsin Ali
Download Mp3
Listen Online