زینب آ گئی بھائی
لو زندانِ شام سے چُھٹ کر
زینب آ گئی بھائی ۔۔۔

اب نہ یہاں سے گھر جائے گی لوٹ کہ یہ ماں جائی
زینب آ گئی بھائی ۔۔۔

بعد تیرے ایسے لوٹا گھر
سر پہ نہ چھوڑی ایک کہ چادر
کھینچ لیا بیمار کا بستر
دیتی رہی میں دُہائی
زینب آگئی بھائی ۔۔۔

تاریکی رستے انجانے
دُشمن ہر سُو نیزے تانے
کرب و بلا کے بن میں نہ جانے
کیسی شام تھی آئی
زینب آ گئی بھائی ۔۔۔

حسرت تو تھی جانِ خواہر
دیتے اجازت گر یہ ستم گر
میت پر کُچھ دیر ٹھہر کر
رو لیتی ماں جائی
زینب آ گئی بھائی ۔۔۔

سر کھولے بے مکھنا و چادر
اعدائ لے گئے ہم کو در در
کیا بولوں ایک ایک قدم پر
کس کس کی یاد آئی
زینب آ گئی بھائی ۔۔۔

کوڑے جب بیمار پہ برسے
روتے تھے ہم سب ہنستے تھے
حکم تیرا تھا ہم بے بس تھے
جھیل گئے رُسوائی
زینب آگئی بھائی ۔۔۔

چلتے چلتے شام جو پہنچے
کچھ مت پوچھو بھیا ہم سے
موت تھی بہتر اس جینے سے
موت مگر نہ آئی
زینب آ گئی بھائی ۔۔۔

روشن تھے ہر گام پہ رستے
کوچہ و بازار سجے تھے
رہ گئی اک تماشا بن کے
قدم قدم ماں جائی
زینب آ گئی بھائی ۔۔۔

ہائے میرا بیمار بھتیجا
پل پل خون کے آنسُو رویا
کیا کرتی مجبور تھی بھیا
کچھ نہ بہن کر پائی
زینب آ گئی بھائی ۔۔۔

غم سے پھٹا جاتا ہے کلیجہ
جاگو برادر اُٹھو بھیا
لے لو اُس لاچار کا پُرسہ
شام جسے چھوڑ آئی
زینب آ گئی بھائی ۔۔۔

تیری یاد میں اُس دُکھیا کے
آنسُو ایک نہ پل تھمتے تھے
کس کو پتہ تھا اس صورت سے
اس کو ملے گی رہائی
زینب آ گئی بھائی ۔۔۔

تیری یاد جب آتی تھی وہ
روتی تھی چلاتی تھی وہ
روز تماچے کھاتی تھی وہ
ہائے تیری شیدائی
زینب آ گئی بھائی ۔۔۔

درد کا پیکر غم کی زباں ہوں
اک تصویرِ آہ و فُغاں ہوں
پُشت پہ میں دُروں کے نشاں ہوں
آج دکھانے آئی
زینب آ گئی بھائی ۔۔۔


zainab aagayi bhai
lo zindane sham se chut kar
zainab aagayi bhai....

ab na yahan se ghar jayegi laut ke ye majayi
zainab aagayi bhai....

baad tere aisa loota ghar
sar pe na chori ek ke chadar
khaynch liya bemaar ka bistar
deti rahi mai duhaai
zainab aagayi bhai....

tareeki raste anjane
dushman har soo naize taane
karbobala ke ban may na jaane
kaisi sham thi aayi
zainab aagayi bhai....

hasrat to thi jaane khwahar
dete ijazat gar ye sitamgar
mayyat par kuch dayr teher kar
ro leti maajayi
zainab aagayi bhai....

sar kholay be-makhna o chadar
aada legaye hum ko dar dar
kya boloo ek ek qadam par
kis kis ki yaad aayi
zainab aagayi bhai

koday jab bemaar pe barse
rote thay hum sab haste thay
hukm tera tha hum bebas thay
jhel gaye ruswaayi
zainab aagayi bhai....

chalte chalte sham jo pahunchay
kuch mat poocho bhaiya hum se
maut thi behtar is jeene se
maut magar na aayi
zainab aagayi bhai....

roshan thay har gaam pe raste
koocha o bazaar saje thay
rehgayi ek tamasha banke
qadam qadam maajayi
zainab aagayi bhai....

haye mera bemaar bhatija
pal pal khoon ke aansoo roya
kya karti majboor thi bhaiya
kuch na behan kar payi
zainab aagayi bhai....

gham se phata jaata hai kaleja
jago baradar utho bhaiya
lelo us lachaar ka pursa
shaam jise chor aayi
zainab aagayi bhai....

teri yaad may us dukhiya ke
aansoo ek na pal thamte thay
kisko pata tha is surat se
usko milegi rihaai
zainab aagayi bhai....

teri yaad jab aati thi wo
roti thi chillati thi wo
roz tamachay khati thi wo
haye teri shedayi
zainab aagayi bhai....

dard ka paykar gham ki zaban hoo
ek tasveere aah o fughan hoo
pusht pe mai durro ke nishan hoo
aaj dikhane aayi
zainab aagayi bhai....
Noha - Zainab Aagayi Bhai

Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online