زہرا کی بیٹیوں کی ردائیں اُتر گئیں
سجاد کو ضعیف صدائیں یہ کر گئیں
زہرا کی بیٹیوں ۔۔۔

لاشوں کو رسیوںمیںجکڑکرلئے پھرو
سیدانیاں تو گھر سے نکلتے ہی مرگئیں
زہرا کی بیٹیوں ۔۔۔

جاتیں تھی جو کبھی کبھی زہرا کی قبر پر
جانے خدا ہجوم سے کیسے گزر گئیں
زہرا کی بیٹیوں ۔۔۔

ظلم و ستم کی تیز ہوائیں تھیں جب چلیں
سب گلشنِ بتول کی کلیاں بکھر گئیں
زہرا کی بیٹیوں ۔۔۔

گودوں سے راہِ شام میں گِرگِر کے مرگئے
بچوں کے لاشے دیکھ کے مائیں بھی مر گئیں         
زہرا کی بیٹیوں ۔۔۔

رملا یہ پوچھتی تھی سکینہ سے قید میں
زخمی ہیں کان بالیاں بی بی کدھر گئیں
زہرا کی بیٹیوں ۔۔۔

بازار لیکے جائو نہ بے پردہ ظالموں
مر جائیں گی حسین کی بہنیں اگر گئیں
زہرا کی بیٹیوں ۔۔۔


zahra ki betiyon ki ridayein utar gayi
sajjad ko zaeef sadayein ye kar gayi
zahra ki betiyon...

laashon ko rassiyon may jakad kar liye phiro
saydaniya to ghar se nikalte hi mar gayi
zahra ki betiyon...

jaati thi jo kabhi kabhi zahra ki qabr par
jaane khuda hujoom se kaise guzar gayi
zehra ki betiyon...

zulmo sitam ki tez hawayein thi jab chali
sab gulshane batool ki kaliyan bikhar gayi
zehra ki betiyon...

godhon se raahe shaam may gir gir ke mar gaye
bachon ke laashe dekh ke maayein bhi mar gayi
zehra ki betiyon...

ramla ye poochti thi sakina se qaid may
zakhmi hai kaan baaliyan bibi kidhar gayi
zehra ki betiyon...

bazaar leke jao na be-parda zaalimo
mar jayegi hussain ki behne agar gayi
zehra ki betiyon...
Noha - Zahra Ki Betiyon

Nohaqan: Mir Hassan Mir
Download Mp3
Listen Online