یہ قید میں علی اکبر کی ماں کا نالہ ہے
نہیں وہ چاند جو گھر کا میرے اُجالا ہے

میرے جوان کو نیزوں سے مار ڈالا ہے
کلیجہ توڑ کے برچھی کا پھل نکالا ہے
غضب ہے لاش کو گھوڑوں سے روند ڈالا ہے
یہ قید میں علی اکبر ۔۔۔۔۔

بتائو لوگو! کہ ڈھونڈنے کدھر جائوں
میں اپنے اکبر محرو کو کس طرح پائوں
ملے تو اپنے کلیجے سے اُسکو لپٹائوں
مر گیا ہے یہ کس طرح دل کو اپنے سمجھائوں
ارے کہاں میرا اٹھارہ سال والا ہے
یہ قید میں علی اکبر ۔۔۔۔۔

خُدا کے واسطے اب رن سے آئو اے اکبر
لعیں ستاتے ہیں آ کہ بچائو اے اکبر
کُھلے سروں پہ ردائیں اُڑھائو اے اکبر
پھوپھی کے حال پہ اب رحم کھائو اے اکبر
تڑپ کے کہتی تھی کن کن دُکھوں سے پالا ہے
یہ قید میں علی اکبر ۔۔۔۔۔

بتائو صبر کر لے کس طرح سے یہ مادر
شبیہہ احمدِ مُختار تھے تم اے دلبر
تمہارے غم میں میرے دل پہ چلتے ہیں خنجر
تمہارے بعد جہاں سے گئے علی اصغر
ملال دُگنا ہے دل کو خلق دوبالا ہے
یہ قید میں علی اکبر ۔۔۔۔۔


ye qaid may ali akbar ki maa ka naala hai
nahi wo chand jo ghar ka mere ujaala hai

mere jawan ko naizo se maar dala hai
kaleja tod ke barchi ka phal nikala hai
ghazab hai laash ko ghodon se raundh dala hai
ye qaid may ali akbar....

batao logon ke dhoondne kidhar jaun
mai apne akbar mehroo ko kis tarha paun
milay to apne kaleje se usko liptaun
mar gaya hai ye kis tarha dil ko samjhaun
aray kahan mera athara saal wala hai
ye qaid may ali akbar....

khuda ke waaste ab ran se aao ay akbar
layeen satate hai aakar bachao ay akbar
khule saron pe ridayein udhao ay akbar
phupi ke haal pe ab rehm khao ay akbar
tadap ke kehti thi kin kin dukhon se paala hai
ye qaid may ali akbar....

batao sabr kare kis tarha se ye madar
shabihe ahmed e mukhtar thay tum ay dilbar
tumhare gham may mere dil pe chalte hai khanjar
tumhare baad jahan se gaye ali asghar
malaal dugna hai dil ko khalaq dubaala hai
ye qaid may ali akbar....
Noha - Ye Qaid May Ali Akbar

Nohaqan: Sachey Bhai
Download Mp3
Listen Online