یہ بین سکینہ کے تھے بابا نہیں آئے
کیوں اے پھُوپھی اماں میرے بابا نہیں آئے

کہتی تھی کے دُنیا سے گزر جائوں گی بابا
اور شام کے زندان ہی میں مر جائوں گی بابا
اب تم سے جُدا ہو کہ کدھر جائوں گی بابا
پاراہے جگر پھر بھی ٹھہر جائوں گی بابا
یہ بین سکینہ کے ۔۔۔

یا رب میرے بابا پہ نہ مقتل میں جفا ہو
میں سوچ رہی ہوں کہیں ایسا نہ ہوا ہو
بابا کو نہ لشکر نے کہیں گھیر لیا ہو
قسمت میں میری داغِ یتیمی نہ لکھا ہو
یہ بین سکینہ کے ۔۔۔

یہ کہہ کے گئے تھے کے ابھی آتا ہوں بی بی
پانی کہیں مل جائے تو میں لاتا ہوں بی بی
میں خونِ جگر پیتا ہوں غم کھاتا ہوں بی بی
اللہ نگہبان ہے میں جاتا ہوں بی بی
یہ بین سکینہ کے ۔۔۔

اب تک تو ہر اک رنج و مصیبت میں گُزر کی
اس رنج و مصیبت کی کسی کو نہ خبر کی
اب جانا یتیمی میں محبت کو پدر کی
اک یاس کا عالم ہے جدھر میں نے نظر کی
یہ بین سکینہ کے ۔۔۔

اللہ کسی کو نہ کرے بے سر و ساماں
جس طرح سے ہم آلِ محمد ہیں پریشاں
ایسا ہو جہاں میں نہ پریشان کوئی انساں
پامال نہ اس طرح سے ہو کوئی گلستاں
یہ بین سکینہ کے ۔۔۔

رُخ بدلے ہوئے اہلِ گلستاں ہیں پھُوپھی جاں
یہ اُمتِ احمد یہ مسلماں ہیں پھُوپھی جاں
بابا کے نہ آنے کے یہ ساماں ہیں پھُوپھی جاں
آسار یتیمی کے نمایاں ہیں پھُوپھی جاں
یہ بین سکینہ کے ۔۔۔

ذکرِ غمِ شبیر میں اب آہ و بقا ہو
اور آنکھوں میں اشکِ غمِ شبیر سجا کر
ہے شہ کا وفادار تو پھر ذکرِ وفا کر
مقتل میں عروج ہر اک اپنے غم کو بھُلا کر
یہ بین سکینہ کے ۔۔۔


ye bain sakina ke thay baba nahi aaye
kyun ay phupi amma mere baba nahi aaye

kehti thi ke dunya se guzar jaungi baba
aur shaam ke zindan hi may mar jaungi baba
ab tum se juda hoke kidhar jaungi baba
paara hai jigar phir bhi tehar jaungi baba
ye bain sakina ke....

ya rab mere baba pe na maqtal may jafa ho
mai soch rahi hoo kahin aisa na hua ho
baba ko na lashkar ne kahin ghayr liya ho
kismat may mere daaghe yateemi na likha ho
ye bain sakina ke....

ye kehke gaye thay ke abhi aata hoo bibi
pani kahin mil jaye to mai laata hoo bibi
mai khoon e jigar peeta hoo gham khaata hoo bibi
allah nigehban hai mai jaata hoo bibi
ye bain sakina ke....

ab tak to har ek ranj o musibat may guzar ki
is ranj o musibat ki kisi ko na khabar ki
ab jaana yateemi may mohabbat ko pidar ki
ek yaas ka aalam hai jigar maine nazar ki
ye bain sakina ke....

allah kisi ko na kare be sar o saman
jis tarha se hum aale mohamed hai pareshan
aisa ho jahan may na pareshan koi insan
pamaal na is tarha se ho koi gulistaan
ye bain sakina ke....

rukh badle hue ahle gulsitan hai phupi jaan
ye ummate ahmed ye musalman hai phupi jaan
baba ke na aane ke ye samaan hai phupi jaan
aasaar yateemi ki numayan hai phupi jaan
ye bain sakina ke....

zikre ghame shabbir may ab aah o buka kar
aur aankhon may ashke ghame shabbir saja kar
hai sheh ka wafadaar to phir zikre wafa kar
maqtal may urooj har ek apne gham ko bhula kar
ye bain sakina ke....
Noha - Ye Bain Sakina
Shayar: Urooj Bijnori
Nohaqan: Tableeq e Imamia (Nazim Hussain)
Download Mp3
Listen Online