صدیوں کے ہر اک ظلم کو کیسے لکھوں
جو ہے درد سینے میں نہیں لکھ سکتا
آک آئیں تو قدموں میں گروں عرض کروں
ہر بات عریضے میں نہیں لکھ سکتا
یہ بات عریضے میں نہیں لکھ سکتا

دکھ یہ ہے کہ غیروں کے علاوہ ہم نے
اپنوں سے بھی ہم سایہ میں پایا ہم نے
یہ منبر و محراب کے سوداگر لوگ
جن کے لئے خود کو بھی مٹایا ہم نے
یہ بات عریضے میں

اس طرح اس دین کی خدمت کی ہے
مجلس میں دل و جان سے خطابت کی ہے
اور بیٹھ کر منبر پہ بڑے فخر کے ساتھ
اس ذکر کی لاکھوں میں تجارت کی ہے
یہ بات عریضے میں

فنکار بھی شاعر بھی صدا گر بھی ہم
احساس نہیں ہے کہ اداکار بھی ہم
نغموں کو بھی نوحوں میں بدلتے ہیں ہم ہی
کہنے کو شاہ دیں کے عزادار بھی ہم
یہ بات عریضے میں

اور دوسری جانب یہ رویہ برتا
ماتم کی تقاوت کو بھی تبدیل کیا
اور مانگ کے اسناد کسائ اپنوں سے
خود آئیہ تطہیر کو مشکوک کیا
یہ بات عریضے میں

لے کر یہ حقیقت ہے کہ یہ امر خدا
کام وہ ہے جنہیں دولت و شہرت نے ڈسا
اے اکثریت قوم کی مخلص کے

مقصد ہے ہٹا ہی نہیں سکتے واللہ
بات عریضے میںیہ

ہم لوگ نمازی بھی ہیں عزادار بھی ہیں
اور اپنی شہادت کے طلب گار بھی ہیں
یہ دشمن حیدر سے بھی کہہ دے کوئی
ہر طرح سے جان دینے پر تیار بھی ہیں
یہ بات عریضے میں

نظروں میں ہے وہ کرب و بلا کا منظر
برچھی میں تھا جس دم علی اکبر کا جگر
مقتل کی زمین سرخ ہوئی جاتی تھی
دم توڑتا تھا باپ کے ہاتھوں میں پسر
یہ بات عریضے میں

چلتا ہے وہ اک تیر جو سہ شوبہ ہے
اس ظلم پہ تاریخ بھی شرمندہ ہے
وہ تیر جو اصغر کے گلے پر ہے لگا
وہ تیر ہر اک قلب میں پیوستہ ہے
یہ بات عریضے میں

بے دستی کے جو آنکھوں میں یہ آنسو ہیں
جذبات علمدار کے بے قابو ہیں
شبیر اٹھاتے ہیں جنہیں رو رو کر
سقائے سکینہ کے کٹے بازو ہیں
یہ بات عریضے میں

پھر وقت نے شاہد نہ یہ منظر دیکھا
کٹتا ہوا سجدے میں کوئی سر دیکھا
بیمار نے خیمے کا ہٹا کر پردہ
شبیر کا سر نوک سناں پر دیکھا
یہ بات عریضے


sadiyon ke har ek zulm ko kaise likhoo
jo dard hai seene may nahi likh sakta
aap aaye to qadmo pa giroo arz karoo
har baat areezay may nahi likh sakta
ye baat areezay may nahi likh sakta

dukh ye hai ke ghairo ke ilawa humne
apno se bhi hum saya may paaya humne
ye mimbar-o-mehrab ke saudagar log
jinke liye khud ko bhi mitaya humne
ye baat areezay....        

is tarha se is deen ki khidmat ki hai
majlis may dil-o-jaan se khitabat ki hai
aur baith kar mimbar pe bade faqr ke saath
is zikr ki laahon may tijarat ki hai
ye baat areezay....        

fankar bhi shayar bhi sadakar bhi hum
ehsaas nahi hai ke adakar bhi hum
naghmo ko bhi nowho may badalte hai humhi
kehne ko sheh-e-deen ke azadar bhi hum
ye baat areezay....        

aur doosri janib ye rawaiyya barta
matam ki saqawat ko bhi tabdeel kiya
aur maang ke asnad kisa apno se
khud aayae tatheer ko mashkook kiya
ye baat areezay....        

lekar ye haqeeqat hai ke ay amre khuda
kam wo hai jinhe daulat-o-shohrat ne dasa
ay aksariyat qaum ki mukhlis ke jise
maqsad he hata hi nahi sakte wallah
ye baat areezay....        

hum log namazi bhi azadar bhi hai
aur apni shahadat ke talabgar bhi hai
ye dushmane hyder se bhi kehde koi
har tarha se jaan dene pe tayyar bhi hai
ye baat areezay....        

nazron may hai wo karbobala ka manzar
barchi may tha jis dam ali akbar ka jigar
maqtal ki zameen surkh hui jaati thi
dum tod-ta tha baap ke haathon pa pisar
ye baat areezay....        

chalta ha wo ek teer jo seh-shoba hai
is zulm pe tareekh bhi sharminda
wo teer jo asghar ke galay par hai laga
wo teer har ek qalb may paywasta hai
ye baat areezay....        

bedasti ki jo aankhon may ye aansu hai
jazbat alamdar ke bekabu hai
shabbir uth-tate hai jinhe ro ro kar
saqqaye sakina ke kate bazu hai
ye baat areezay....        

phir waqt ne shahid na ye manzar dekha
kat-ta hua sajde may koi sar dekha
bemaar ne khaimay  ka hata kar parda
shabbir ka sar noke sina par dekha
ye baat areezay....
Noha - Ye Baat Areezay
Shayar: Shahid Jafer
Nohaqan: Murtaza/Riaz
Download mp3
Listen Online