زینب کے یہ دلبر ہیں یہ عون و محمد ہیں
یہ وارثِ جعفر ہیںیہ عون و محمد ہیں

میدان میں بھاری ہیں یہ دونوں ہزاروں پر
یہ شیرِ دلاور ہیں یہ عون و محمد ہیں
زینب کے یہ ۔۔۔۔۔

دیوار سے کوفے کی ٹکرا دیا فوجوں کو
یہ ثانیئے حیدر ہیں یہ عون و محمد ہیں
زینب کے یہ ۔۔۔۔۔

دربار میں لوگو ں کو یہ شمر بتاتا تھا
چھوٹے سے جو دو سر ہیں یہ عون و محمد ہیں
زینب کے یہ ۔۔۔۔۔

زینب نے کہا بھّیا یہ آپ کا صدقہ ہے
یہ عزم کے پیکر یہ عون و محمد ہیں
زینب کے یہ ۔۔۔۔۔

حیدر کی شجاعت کے وارث ہیں زمانے میں
یہ دونوں برابر ہیں یہ عون و محمد ہیں
زینب کے یہ ۔۔۔۔۔

ہیں سن بھی ابھی چھوٹے ہیں غنچہ دہن دونوں
اور عزم میں اکبر ہیں یہ عون و محمد ہیں
زینب کے یہ ۔۔۔۔۔

مقتل سے ریاض آئی زہرا کی صدا مجھ کو
یہ خون میں جو تر ہے یہ عون و محمد ہیں
زینب کے یہ ۔۔۔۔۔


zainab ke ye dilbar hai ye auno mohamed hai
ye warise jafar hai ye auno mohamed hai

maidan may bhari hai ye dono hazaro par
ye shere dilawar hai ye auno mohamed hai
zainab ke ye....

dewaar se kufe ki takradiya faujo ko
ye saniye hyder hai ye auno mohamed hai
zainab ke ye....

darbar may logon ko ye shimr batata tha
chote se jo do sar hai ye auno mohamed hai
zainab ke ye....

zainab ne kaha bhaiya ye aap ka sadqa hai
ye azm ke paykar ye auno mohamed hai
zainab ke ye....

hyder ki shuja-at ke waris hai zamane may
ye dono barabar hai ye auno mohamed hai
zainab ke ye....

hai sin bhhi abhi chotay hai ghuncha dahan dono
aur azm may akbar hai ye auno mohamed hai
zainab ke ye....

maqtal se riyaz aayi zehra ki sada mujhko
ye khoon may jo tar hai ye auno mohamed hai
zainab ke ye....
Noha - Ye Aun o Mohamed Hai
Shayar: Riyaz Meerti
Nohaqan: Shuja Haider
Download Mp3
Listen Online