یا رب کوئی معصومہ زنداں میں نہ تنہا ہو
پابند نہ ہوں آہیں ،رونے پہ نہ پہرا ہو
یا رب کوئی معصومہ ۔۔۔۔۔

تھی جس کو نیند آتی شبیر کے سینے پر
زنداں درزنداں ، اُس کے لیئے قضا ہو
یا رب کوئی معصومہ ۔۔۔۔۔

زندانوں سے آتی تھی آواز سسکنے کی
جیسے کے سکینہ کو، ہر زندان رو رہا ہو
یا رب کوئی معصومہ ۔۔۔۔۔

ٹکرائے نہ وہ کیونکر زنداں کی دیواروں سے
بھائی سے اور پھُوپھی سے، جس کو جُدا کیا ہو
یا رب کوئی معصومہ ۔۔۔۔۔

زنداں میں اے نجفی یاد آئی سکینہ کی
دل رو رو کہہ رہا ہے ، اب نہ اُجالا ہو
یا رب کوئی معصومہ ۔۔۔۔۔


ya rab koi masooma zindaan may na tanha ho
paband na ho aahein, ronay pe na pehra ho
ya rab koi masooma....

thi jis ko neend aati shabbir ke seene par
zindaan dare zindaan, uske liye kazaa ho
ya rab koi masooma....

zindaano se aati thi awaaz sisaknay ki
jaise ke sakina ko, har zindaan ro raha ho
ya rab koi masooma....

takraye na wo kyon kar zindaan ki diwaaro se
bhai se aur phuphi se, jisko juda kiya ho
ya rab koi masooma....

zindaan may ahmad bhi yaad aayi sakina ki
dil roro keh raha hai, ab na ujaala ho
ya rab koi masooma....
Noha - Ya Rab Koi Masooma
Shayar: Ahmed
Nohaqan: Hasan Sadiq
Download Mp3
Listen Online